یوم شہادت علیؓ کا سیکیورٹی پلان ڈی پی اوز اپنی نگرانی میں بنوائیں، آئی جی پنجاب

یوم شہادت علیؓ کا سیکیورٹی پلان ڈی پی اوز اپنی نگرانی میں بنوائیں، آئی جی ...

  

لاہور(کرائم رپورٹر)انسپکٹر جنرل پولیس پنجاب کیپٹن (ر) عارف نوازخان نے کہا ہے کہ صوبے بھر میں 21رمضان المبارک کو یوم شہادت حضرت علیؓ کے موقع پر1620مجالس اور ماتمی جلوسوں کی سیکیورٹی کیلئے تمام دستیاب وسائل بروئے کار لا ئے جائیں اوراس بات پر بطور خاص توجہ دی جائے کہ یوم علی کا سیکیورٹی پلان ڈی پی اوز اپنی نگرانی میں تیار کروائیں جبکہ مجالس اور جلوسوں کے منتظمین کی مفید تجاویز کو بھی مدِ نظر رکھا جائے۔ حساس اضلاع اور اے کیٹیگری کے مرکزی جلوسوں کو 4 لئیر سیکیورٹی فراہم کی جائے اورتمام عزاداروں کو واک تھرو گیٹس ، میٹل ڈٹیکٹر سے چیک ہوئے بغیر جلوس میں ہر گز داخل نہ ہونے دیا جائے ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے سنٹرل پولیس آفس میں منعقدہ آر پی اوز ، ڈی پی اوز ویڈیو لنک کانفرنس میں افسران کو ہدایات دیتے ہوئے کیا ۔ کانفرنس میں سی سی پی او لاہور کیپٹن (ر) محمد امین وینس، ایڈیشنل آئی جی آپریشنز عامر ذوالفقار خان ، آر پی او بہاولپوروسیم احمد سیال ، ڈی آئی جی آپریشنز لاہور ڈاکٹر معین مسعوداور ڈی آئی جی لیگل عبد الرب سمیت دیگر سینئر افسران موجود تھے جبکہ صوبے کے تمام آر پی اوز اور ڈی پی اوز نے بذریعہ ویڈیولنک شرکت کی ۔ایڈیشنل آئی جی آپریشنز پنجاب عامر ذوالفقار خان نے کانفرنس میں بریفنگ دیتے ہوئے آئی جی پنجاب کو بتایا کہ 40ہزارسے زائد پولیس افسران، اہلکار اور رضا کار یوم علی کے موقع پر پنجاب بھر میں سیکیورٹی کے فرائض سر انجام دیں گے جبکہ 261واک تھرو گیٹس،5382میٹل ڈیٹیکڑز اور996سی سی ٹی وی کیمرے جلوسوں اور مجالس کی مانیٹرنگ کے لیے نصب کیے جائیں گے۔ سی سی پی او لاہور کیپٹن (ر) محمد امین وینس اور تمام آرپی اوز نے اپنے اضلاع اور ریجن میں رمضان کے آخری عشرے بالخصوص یوم علی اور جمعتہ الوداع کے سیکیورٹی پلان کے حوالے سے بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ شہریوں کے جان و مال کے تحفظ کیلئے موثر اقدامات کاسلسلہ جاری ہے ۔ آئی جی پنجا ب نے مزید کہا کہ صوبے بھر میں اہم شخصیات کے سیکیورٹی عملے کی تعدادہر صورت جاری کردہ ایس او پیز کے مطابق ہو اور صوبے کے تمام اضلاع میں عدالتوں کی سیکیورٹی انتظامات میں مزید بہتری لاتے ہوئے تمام سائلین اور مقدمات کی پیروی کیلئے آنے والے فریقین کو مکمل جامہ تلاشی کے بعد عدالت کے احاطے میں داخلے کی اجازت دی جائے ۔

مزید :

علاقائی -