این اے 79،پی ٹی آئی کا امیدوار فائنل، (ن) لیگ کشمکش کا شکار

این اے 79،پی ٹی آئی کا امیدوار فائنل، (ن) لیگ کشمکش کا شکار

  

جامکے چٹھہ(چوہدری قیصراقبال وڑائچ) تحصیل وزیرآباد کا حلقہ این اے 79 مسلم لیگ (ن) کیلئے بہت اہمیت رکھتا ہے کیو نکہ یہ حلقہ گزشتہ کہیں سالوں سے مسلم لیگ (ن) کا گڑھ اور نواز شریف کے متوالوں کا حلقہ سمجھاجاتا ہے اب 2018 کے الیکشن میں یہ حلقہ مسلم لیگ ن کی قیادت میں بہت اہمیت کا حامل ہے اس تحصیل وزیرآباد کے حلقہ این اے 79 میں مسلم لیگ ن کے امیدوار برائے قومی اسمبلی کیلئے بہت سے امیدوار سامنے آرہے ہیں جن میں چوہدری عدنان سرور چیمہ ،ڈاکٹر نثار احمد چیمہ ،چوہدری ساجد حسین چٹھہ ، چوہدری اعجاز احمد پرویا ،چوہدری نوازش علی چیمہ ودیگر نام سامنے آرہے ہیں تاہم مسلم لیگ ن کے امیدوار برائے قومی اسمبلی کے جو دو بڑے نام سامنے آرہے ہیں ان میں سابق وزیردفاع کرنل ریٹائرڈ غلام سرور چیمہ کے صاحبزادے انجینئر چوہدری عدنان سرور چیمہ اور سابق ڈی جی ہیلتھ پنجاب ڈاکٹر نثار احمد چیمہ کے نام زیر بحث چل رہے ہیں جو عوامی حلقوں میں کافی مقبول ہیں تاہم مسلم لیگ ن کی بڑی قیادت سے ابھی تک ان دونوں میں سے کسی ایک کوبھی قومی اسمبلی کی سیٹ کے لئے گرین سگنل نہیں ملا ہے تاہم اس حلقہ میں تحریک انصاف کے امیدوار محمد احمد چٹھہ کا نام فائنل ہوچکا ہے،مسلم لیگ (ن) امیدواران عدنان سرورچیمہ اور ڈاکٹر نثار احمدچیمہ اپنی اپنی ٹکٹ کے حصول کیلئے ایڑی چوٹی کا زور لگائے ہوئے ،ہیں ۔ اب دیکھنا ہی ہے کہ ان دونوں میں سے کسی ایک خوش قسمت امیدوار کو این اے 79 کی ٹکٹ کے لئے مسلم لیگ ن کی قیادت سے فائنل گوہیڈ ملے گا۔ واضع ہوکہ گزشتہ روز محض افواہ کے طور پر مسلم لیگ ن کی قیادت کی طرف سے ڈاکڑ نثار احمد چیمہ کو گرین سگنل ملنے کی نیوز شائع ہوئی تھی مگر ذرائع کے مطابق ابھی تک مسلم لیگ ن کی قیادت سے حلقہ این اے 79 میں کسی بھی امیدوار کوابھی تک مسلم لیگ ن کی قیادت سے کوئی گرین سگنل نہیں ملا ہے جبکہ ڈاکڑ نثار احمد چیمہ کے زرائع کے مطابق مسلم لیگ ن کی قیادت سے حلقہ این اے 79 کی سیٹ کے لئے ڈاکڑ نثار احمد چیمہ کو الیکشن لڑنے کا گرین سگنل مل گیا ہے جبکہ دوسرے امیدوار برائے قومی اسمبلی چوہدری عدنان سرور چیمہ کے چھوٹے بھائی چوہدری جوہر سرور چیمہ کے مطابق ابھی تک حلقہ این اے 79 میں مسلم لیگ ن کے دو بڑے امیدوار چوہدری عدنان سرور چیمہ اور ڈاکڑ نثار احمد چیمہ کے نام سامنے آرہے ہیں ابھی تک ان دونوں میں سے کسی ایک کو بھی ابھی تک مسلم لیگ ن کی قیادت سے کوئی گرین سگنل نہیں ملا ہے جبکہ اس کے مقابلے میں پی ٹی آئی کاایک ہی امیدوار برائے قومی اسمبلی چوہدری محمد احمد چٹھہ کا نام پی ٹی آئی کی قیادت سے فائنل ہو چکا ہے اب پی ٹی آئی کا امیدوار چوہدری محمد احمد چٹھہ بھرپور تیاری اور اپنی انتھک محنت لئے ہوئے مسلم لیگ ن کے کسی بھی امیدوار کا مقابلہ کرنے کے لئے تیا ر ہوکر میدان میں اتر چکا ہے جو اس 2018 کے الیکشن میں مسلم لیگ ن کو اپ سیٹ کرنے کی بھرپور صلاحیت رکھتا ہے اور حلقہ این اے 79 میں محمد احمد چٹھہ کی مقبولیت کا گراف کافی بلند جارہا ہے چوہدری محمد احمد چٹھہ سابق اسپیکر قومی اسمبلی چوہدری حامد ناصر چٹھہ کا صاحبزادہ ہے تاہم کچھ کہنا قبل ازوقت ہے کیونکہ مسلم لیگ ن کی طرف سے اگر انجینئر چوہدری عدنان سرور چیمہ کا نام فائنل ہوتا ہے تو حلقہ این اے 79 میں چوہدری عدنان سرور چیمہ پی ٹی آئی کے امیدوار چوہدری محمد احمد چٹھہ کا بھرپور مقابلہ کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔تاہم عوامی حلقوں کے مطابق اس وقت مسلم لیگ ن کے موجودہ ایم این اے جسٹس ریٹائرڈ افتخار احمد چیمہ کی مقبولیت کا گراف کافی ڈاؤن ہوا ہے اگر ان کے بھائی ڈاکڑ نثار احمد چیمہ کو مسلم لیگ ن کی طرف سے حلقہ این اے 79 کیلئے سیٹ لڑنے کا گرین سگنل ملتا ہے تو ان کوپی ٹی آئی کے امیدوار چوہدری محمد احمد چٹھہ کا مقابلہ کرنے کے لئے کافی محنت درکار ہوگی تاہم موجودہ صورتحال میں اس وقت مسلم لیگ ن کے امیدواروں کے مقابلے میں پی ٹی آئی کے امیدوار چوہدری محمد احمد چٹھہ کا ایک ہی نام سامنے آرہا ہے جو مسلم لیگ ن کے کسی بھی امیدوار کو ہرانے کی بھرپور صلاحیت رکھتا ہے مگر حلقہ این اے 79 مسلم لیگ ن کا گڑھ سمجھا جاتا ہے اور مسلسل مسلم لیگ ن کے امیدوار قومی اسمبلی جسٹس ریٹائرڈ افتخاراحمد چیمہ اس حلقہ سے جیت چکے ہیں۔

مزید :

صفحہ آخر -