نجی بینک کے صدر کوجاری توہین عدالت کا نوٹس سلمان اسلم بٹ کی معذرت پر واپس

نجی بینک کے صدر کوجاری توہین عدالت کا نوٹس سلمان اسلم بٹ کی معذرت پر واپس

  

لاہور(نامہ نگارخصوصی)سپریم کورٹ نے ملازمین کو پنشن نہ دینے پر ایک نجی بینک کے صدر کوجاری کیا گیا توہین عدالت کا نوٹس اس کے وکیل سابق اٹارنی جنرل سلمان اسلم بٹ کے ہاتھ جوڑنے پر واپس لے لیا۔چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے نجی بینکوں کے ملازمین کو پنشن کی عدم ادائیگی کے خلاف کیس کی سماعت کی، چیف جسٹس نے عدالتی فیصلے پر عمل درآمد نہ ہونے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ہمیں کچھ مخصوص وکلاء کی گردنوں میں سریا نظر آ رہا ہے کچھ عرصے سے ان وکلاء کے روئیے میں تکبر محسوس کر رہے ہیں، سابق اٹارنی جنرل سلمان اسلم بٹ نے بتایا کہ یو بی ایل نے ریٹائرڈ ملازمین کو 8 ہزار پنشن دینے پر اپنا جواب جمع کروا دیا ہے اور یو بی ایل نے بھی عدالتی فیصلے ویسے عمل کیا ہے جیسے ایم سی بی، اے بی ایل اور ایچ بی ایل نے کیا ہے، چیف جسٹس پاکستان نے ریمارکس دیئے کہ ہمیں پنشن کی عدم ادائیگی کی شکایات آ رہی ہیں، ہم سے غلط بیانی نہ کریں، صدر یو بی ایل کو کہیں وہ پنشن کی ادائیگی کا بیان حلفی عدالت میں جمع کروائیں، یونائیٹڈ بنک لمیٹڈ کے وکیل سلمان اسلم بٹ نے کہا کہ بیان حلفی کی بجائے ہم نے مکمل جواب عدالت میں جمع کروا دیا ہے، چیف جسٹس نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہ عدالتی حکم پر عمل درآمد کیوں نہیں کیا گیا؟ چیف جسٹس نے صدر یو بی ایل کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کیا تو یو بی ایل بنک کے وکیل سلمان اسلم بٹ عدالت میں ترلے منتیں کرتے ہوئے روسٹرم پر آ گئے اور ہاتھ جوڑتے ہوئے کہا کہ پلیز توہین عدالت کا نوٹس واپس لے لیں میں عدالتی فیصلے پر عمل درآمد کا وعدہ کرتا ہوں، چیف جسٹس پاکستان نے ریمارکس دیئے کہ عید سے پہلے بنک ملازمین کو پنشن دے دیں اللہ آپ سے خوش ہو گا، یہ غریب لوگ ہیں چند ہزار پنشن دینے سے کوئی فرق نہیں پڑے گا، سپریم کورٹ نے سلمان اسلم بٹ ایڈووکیٹ کے ہاتھ جوڑنے پر صدر یو بی ایل کے خلاف توہین عدالت کا نوٹس واپس لے لیا اور یو بی ایل کو عدالتی فیصلے کے مطابق بنک ملازمین کو پنشن ادا کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے مزید سماعت ایک ہفتے تک ملتوی کر دی۔

نوٹس /واپس

مزید :

صفحہ آخر -