وہ ملک جہاں ہزاروں گھوڑوں کو گولیاں مارکرہلاک کرنے کی اجازت دے دی گئی لیکن وجہ کیا بنی؟

وہ ملک جہاں ہزاروں گھوڑوں کو گولیاں مارکرہلاک کرنے کی اجازت دے دی گئی لیکن ...
وہ ملک جہاں ہزاروں گھوڑوں کو گولیاں مارکرہلاک کرنے کی اجازت دے دی گئی لیکن وجہ کیا بنی؟

  

سڈنی(ڈیلی پاکستان آن لائن) آسٹریلیا میں ہزاروں جنگلی گھوڑوں کو گولیاں مارکرہلاک کرنے کا فیصلہ کرلیا گیا ہے اور سپریم کورٹ نے بھی اس کی توثیق کردی ہے۔ ڈیلی میل کی ایک رپورٹ کے مطابق آسٹریلیا کے کسان نے سپریم کورٹ میں درخواست دائرکی تھی جس میں اپیل کی گئی تھی کہ وکٹورین ہائی لینڈ ز میں جنگلی گھوڑوں کے قتل عام کے فیصلے کو روکا جائے۔

اس کیس کی سماعت جسٹس سٹیون موور نے کی۔ جمعہ کو ہونے والی سماعت کے دوران انہوں نے کہا کہ پارکس وکٹوریہ کو ماحول کو نقصان پہنچانے والے جانوروں کو گولی مارکرہلاک کرنے کیلیے کمیونٹی سے مشاورت کی ضرورت نہیں ہے۔انہوں نے کہا اس حوالے سے ایکشن پلان ترتیب دے دیا گیا تھا اور اب سب منصوبہ بندی کے مطابق ہورہاہے۔

دوسری جانب کسان فلپ میگور نےسپریم کورٹ کے فیصلے کے خلاف اپیل دائر کرنے کااعلان کیا ہے۔ انہوں نے الزام لگایا ہے کہ پارک انتظامیہ نے جانوروں کو ہلاک کرنے کی اپنی پالیسی تبدیل کی ہے اور اس ضمن میں لوگوں کو کوئی آگاہی نہیں دی گئی۔

ان کا کہنا ہے کہ ان جانوروں کو ہلاک نہ کیا جائے۔ وہ اس سے پہلے بھی متعدد جانوروں کی جان بچا چکے ہیں اور مزید 150 گھوڑوں کی ذمہ داری اٹھانے کو تیار ہیں۔

دوسری جانب پارکس وکٹوریہ کی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ وہاں پانچ ہزار ایسے جنگلی گھوڑے ہیں جو بدک چکے ہیں اور انہیں تلف کرنا بہت ضروری ہے۔

خیال رہے اس سے قبل آسٹریلوی محکمہ جنگلات نے سیکڑوں اونٹوں کو بھی نقصان دہ قرار دے کرہلاک کردیاتھا۔

مزید :

بین الاقوامی -ماحولیات -