امریکہ کے 140 شہروں میں ہنگامے اور مظاہرے، وائٹ ہاﺅس کے باہر بھی جنگ کے میدان کا منظر

امریکہ کے 140 شہروں میں ہنگامے اور مظاہرے، وائٹ ہاﺅس کے باہر بھی جنگ کے میدان ...
امریکہ کے 140 شہروں میں ہنگامے اور مظاہرے، وائٹ ہاﺅس کے باہر بھی جنگ کے میدان کا منظر

  

واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکی ریاست منیسوٹا کے شہر منیپولیس میں پولیس کے ہاتھوں ایک سیاہ فام شہری جارج فلوئیڈ کی ہلاکت پر شروع ہونے والے ہنگامے پورے ملک میں پھیلنے کے بعد اب وائٹ ہاﺅس تک بھی پہنچ گئے ہیں۔ میل آن لائن کے مطابق گزشتہ روز ہزاروں مظاہرین وائٹ ہاﺅس کے باہر جمع ہو گئے جہاں پولیس اور سیکرٹ سروس ایجنٹس کے ساتھ ان کی جھڑپیں ہوئیں۔ ان جھڑپوں میں سینکڑوں شہری اور 50سیکرٹ سروس ایجنٹ شدید زخمی ہو گئے۔ تمام دن وائٹ ہاﺅس کے باہر میدان جنگ کا سا منظر رہا۔

رپورٹ کے مطابق جارج فلوئیڈ کی ہلاکت کے بعد ہنگامے اور احتجاج چھٹے روز میں داخل ہو چکے ہیں اور ان کا دائرہ پورے امریکہ میں پھیل چکا ہے۔ ان ہنگاموں کی آڑ میں مختلف شہروں میں لوٹ مار کا سلسلہ بھی جاری ہے۔ گزشتہ روز نیویارک میں گوچی سمیت دیگر کئی سٹور لوٹ لیے۔ فلاڈیلفیا میں درجنوں سٹورز لوٹے جا چکے ہیں۔ پولیس کے مطابق اس وقت امریکہ کے 140سے زائد شہروں میں بدترین ہنگامے جاری ہیں۔ واشنگٹن میں مشتعل مظاہرین نے وائٹ ہاﺅس کے سامنے واقع تاریخی سینٹ جانز چرچ کو بھی آگ لگا دی۔ پولیس کی طرف سے مظاہرین پر آنسو گیس کی شیلنگ کی گئی اور ربڑ کی گولیاں چلائی گئیں۔ جواب میں مظاہرین کی طرف سے پولیس پر پتھراﺅ کیا گیا۔ واضح رہے کہ اب تک 40شہروں میں کرفیو نافذ کیا جا چکا ہے، اس کے باوجود ہنگاموں میں شدت آتی جا رہی ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -