اتنی مشہور ہوجائوں گی ، کبھی سوچا بھی نہیں تھا!

اتنی مشہور ہوجائوں گی ، کبھی سوچا بھی نہیں تھا!

  

شاعرہ رائے پاکستان کی مقبول ٹرانس جینڈر گلوکار،ماڈل اور اداکارہ ہیں۔کچھ عرصہ پہلے ریلیز ہونے والے ان کے گانے ”کملی“ نے پاکستان سمیت دنیا بھر میں مقبولیت حاصل کی اور اسی بنیاد پر اسے ”کانز فلم فیسٹیول“ کے لئے بھی منتخب کرلیا گیا ہے جو سال رواں جولائی میں ہوگا۔شاعرہ رائے کا تعلق سیالکوٹ سے ہے جہاں ابتدائی تعلیم کے بعد وہ لاہور آگئیں لیکن اولیول کے بعد وہ بئی منتقل ہوگئیں۔ انہوں نے وہاں سے بی ایس سی انٹریئر ڈیزائننگ اور پھرAmity University سے ماس کمیونیکشن میں ماسٹرز کیا۔شاعرہ رائے زندگی کے ہر موضوع پر جامع گفتگو کرتی ہیں اور ہر معاملے میں ان کے خیالات بہت واضح ہیں۔اپنے انٹرویو کے دوران انہوں نے معاشرتی رویوں کے بارے کھل کر بات کی جو قارئین کی نذر ہے۔شاعرہ رائے نے بتایا کہ میں وکرم بھٹ کی فلم ”گھوسٹ“  کے لئے ایک گانا ”رات“ گایا تھا جسے بہت پسند کیا گیا۔ اس کے علاوہ بھارتی ویب سیریز ”زخم“ کا گانا بھی گاچکی ہوں۔جب سکول میں تھی تو اسی وقت گانے کی تربیت لینا شروع کردی تھی۔ گلوکاری میں انوررفیع میرے باقاعدہ استاد ہیں۔2019میں باقاعدہ میں نے کیرئر کا آغاز کردیا تھامیں ریتھک روشن کے ساتھ فلم”موہنجو داڑو“ پربھاسن کے ساتھ”ساہو“ اور ”اسٹریٹ ڈانسر“ میں بھی کیمیو رول کرچکی ہوں۔ایک پاکستانی فلم”عکس“میں کام کیا جس میں اداکارہ میرا بھی شامل تھیں لیکن یہ فلم ریلیز نہیں ہوسکی جس کا بہت افسوس ہے۔ 2020میں ہونے والے”پیساایوراڈ“ میں میرا گایا ہوا فلم ”گھوسٹ“کا گانا بھی نامزد ہوا۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے بتایا کہ ”کملی“ کے لئے محسن عباس حیدر کا انتخاب خود کیا تھا۔خالد خان نے میوزک کیا،اسد چوہدری کو ماڈل لیاجن کے ساتھ وسیم علی بھی تھے اور اس کی ڈائریکشن سنی یو جی نے دی۔ہم نے اسے میوزک وڈیو نہیں بلکہ شارٹ فلم کے لیول پر بنایا۔پہلے میں نے سوچا کہ بالی ووڈسے ریلیز کروں لیکن وہ لوگ پرموشن نہیں دے رہے تھے،ٹی سیریز اور یش راج فلمز کے ساتھ میری بات چیت ہوئی تھی۔یہ گانا دنیا کے آٹھ بڑے فلم فیسٹیولز میں جاچکا ہے جن میں دبئی،میامی اور کاروان فلم فیسٹیولز بھی شامل ہیں۔ میرا گانا اے آروائی فلمز نے ریلیز کیا جو ماضی میں صرف فلمیں ہی ریلیز کرتا تھا۔اب میں ”کملی“کا سیکوئیل بنانے کی تیاریوں میں مصروف ہوں جس میں کئی سرپرائز موجود ہیں جن کے بارے میں فی الوقت نہیں بتا سکتی۔ میرے گانے”کملی“کی کامیابی میں اسٹارڈم انٹرٹیمنٹ کا بھی بہت اہم کردار ہے۔کملی کے سیکوئیل میں ملک کے نامور سپراسٹار نظرآئیں گے۔ انہوں نے کہا کہ میں نے کبھی سوچا نہیں تھا کہ اتنی جلدی اس مقام تک پہنچ جاؤں گی کیونکہ مجھ سے پہلے یہاں اتنے زیادہ لوگ کام کررہے ہیں۔ انڈسٹری میں آنا اور کامیاب ہونا ویسے ہی بہت مشکل ہے۔کراچی والے تو دوسری لڑکیوں کو برداشت ہی نہیں کرتے۔ شاعرہ رائے نے بتایا کہ اداکارہ میرا کے ساتھ میری بہت اچھی دوستی رہی جو اب ختم ہوگئی کیونکہ گزشتہ سال میرا نے مجھے لاہور میں اپنے گھر میں رہنے کی دعوت دی لیکن دو دن بعد ہی اسے میرا وجود برداشت نہ ہوا۔ چونکہ میں کام کررہی تھی اور وہ فارغ تھی اس لئے وہ مجھ سے خائف تھی،مجھے حقارت بھری نظروں سے دیکھتی اور کہتی تم سٹار نہیں بلکہ سٹار میں ہوں۔ اس نے مجھے دھکے دیئے اور ناخن بھی مارے، پھر رونے لگ پڑی اور معافی مانگ لی یوں ہماری چار سالہ دوستی ختم ہوگئی۔اب میں بہت مضبوط ہوگئی ہوں،لوگ مجھ سے بہت پیار کرتے ہیں۔فیس بک پر میرے ایک ملین فین ہونے والے ہیں۔حال ہی میں نے ندیم چیمہ کی فلم ”عشق آتش“سائن کی جس میں لیڈ رول کررہی ہوں۔فلم کی کہانی میری زندگی کے قریب تر ہے۔میری کمپنی”رائے موشن پکچرز“ فلم کی معاون پروڈیوسر ہے۔ ابھی میرا ارادہ ڈراموں میں کام کرنے کا نہیں ہے کیونکہ اچھے رولز کی آفر نہیں ہوئی۔ایک سوال کے جواب میں شاعرہ رائے نے کہا کہ این جی اوز ٹرانس جینڈرز کے لئے کچھ نہیں کرتیں ورنہ یہ لوگ سڑکوں پر بھیک نہ مانگ رہے ہوتے ۔این جی اوز ان لوگوں کے نام پر پیسے کماتی ہیں لیکن ان لوگوں کو بھی چاہیئے کہ خود سے محنت کریں اور اپنی زندگی تبدیل کریں کیونکہ آج کی دنیا میں بہت مواقع ہیں۔ میں نے ٹرانس جینڈر کے لئے فیصلہ کیا ہے کہ لاہور میں سٹوڈیو بناکرانہیں اداکاری اور ماڈلنگ کی تربیت دوں گی۔ انہوں نے بتایا کہ خواجہ سرا اور ٹرانس وومن میں بہت فرق ہوتا ہے، وہ پیدائش سے لے کر تقریبا بلوغت تک لڑکا ہی تھیں تاہم ان میں کبھی بھی لڑکوں والے احساسات نہیں جاگے اور ان کی شکل اور آواز بھی لڑکیوں کی طرح تھی۔ میری آواز اور شکل و صورت لڑکیوں والی تھی۔ ایک وقت ایسا بھی آیا جب گھر والوں نے مجھ سے رشتہ ختم کردیا۔پھر میں نے آپریشن کرایا جس کا مشورہ مجھے ڈاکٹر نے ہی دیا تھا۔ میری شادی ہونے والی تھی میں نے سسرال والوں کو سچائی بتائی تو انہوں نے رشتہ ہی ختم کردیا جس پر میں خودکشی کی کوشش بھی کی۔اب میری کوئی خواہش نہیں ہے کہ کسی کو چاہوں یا پسند کروں۔میں شادی تو کرسکتی ہوں۔

٭٭٭

 معروف رائٹر ڈائریکٹر عتیق الرحمن کا کہنا ہے کہ ہماری ڈرامہ انڈسٹری نے پوری دنیا میں اپنا لوہا منوایا ہے۔ میں نے اپنے کیرئیر کے دوران ہمیشہ اعلیٰ اور معیاری کام کو ترجیح دی ہے میری کوشش ہوتی ہے کہ میں اپنے کام سے 

مزید :

ایڈیشن 1 -