ملک بھر میں تعلیمی ایمرجنسی نافذ کی جائے،اویس احمد کاٹھیا

  ملک بھر میں تعلیمی ایمرجنسی نافذ کی جائے،اویس احمد کاٹھیا

  

لاہور(پ ر) سینئرصوبائی نائب صدر آپسما پارٹی کنوینر آپسمااویس احمد کاٹھیا نے کہا ہے کہ پاکستان نے کہا ہے کہ ملک میں تعلیمی ایمرجنسی نافذ کی جائے۔ پرائیویٹ سکول سسٹم تباہی کی جانب گامزن ہے۔کورونا وباء  کے سبب نجی تعلیمی ادارے ڈیڑھ سال تک بند رہے۔ ہزاروں تعلیمی ادارے اپنی بقاء کی جنگ لڑتے لڑتے  ختم ہو گئے۔حکومت نے اس اہم شعبہ کی بحالی کے لیے کسی قسم کا ریلیف نہیں دیا۔ حکومت کو سالانہ اربوں روپے ٹیکس دینے والا یہ شعبہ حکمرانوں کی ناقص پالیسیوں اور حکمت سے عاری فیصلوں کی بھینٹ چڑہ گیا۔ ایک محتاط اندازے کے مطابق اس وقت تک ملک کے 50% نجی تعلیمی ادارے مکمل طور پر بند ہوچکے ہیں۔ ملک میں کورونا سے بھی بڑھ کر تعلیمی بحران پیدا ہوگیا ہے۔ معیشت پر اس کے منفی اثرات عرصہ دراز تک محسوس کیئے جائیں گے۔ سب سے زیادہ نقصان کم فیس کے حامل تعلیمی اداروں کو ہوا ہے۔ حکمرانوں کی بے حسی اور عدم توجیح کے باعث سب سے زیادہ یہ شعبہ متاثر ہوا ہے۔

 اور اسی کی طرف سب سے زیادہ توجہ دی جانی چاہئے تھی۔ لمحہ فکریہ یہ کہ اس وقت تک آؤٹ آف سکولز بچوں کی تعداد میں غیر معمولی اضافہ ہوا ہے غربت و مہنگائی کے باعث بچوں میں چائلڈ لیبر کا رجحان بڑھا ہے۔ حکومت آئندہ بجٹ میں تباہ حال تعلیمی اداروں کی بحالی کے لیے رقم مختص کرے۔ اور فوری طور پر قرضے فراہم کیے جائیں۔ تعلیمی اداروں کو ہونے والے غیر معمولی نقصان کا ازالہ کرتے ہوئے 4 ہزار روپے سے کم فیس وصول کرنے والے تعلیمی اداروں کو 5 سال تک تمام قسم کے ٹیکسز سے مستنثنی قرار دے۔بجلی کے ٹیرف کو کمرشل کی بجائے ڈومیسٹک کیا جائے۔2018 والی پوزیشن پر بحال کیا جائے۔تمام نجی تعلیمی اداروں کے بجلی کے نظام کو آسان شرائط پر سولر سسٹم پر منتقل کیا جائے۔تعلیم کے لیے مختص کردہ بجٹ کو انٹر نیشنل سٹینڈرڈ کے مطابق 4% کیا جائے۔ملک میں تعلیمی ایمرجنسی کا فوری نفاذ کیا۔ تعلیمی کو اولین ترجیح دی جائے۔سوشل سیکیورٹی اور اولڈ ایج بینیفٹ کے اطلاق حسب سابق 20 ممبران پر کیا جائے۔پانی کے بل ختم کیے جائیں۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -