احتساب سے گھبرانے والا نہیں، علی ظفر رپورٹ پبلک کی جائے، جہانگیرترین 

احتساب سے گھبرانے والا نہیں، علی ظفر رپورٹ پبلک کی جائے، جہانگیرترین 

  

لاہور(نامہ نگار)بینکنگ جرائم عدالت نے شوگر ملز سکینڈل کے جعلی بنک اکاؤنٹس کیس میں جہانگیر ترین اورصاحبزادے علی ترین کی عبوری ضمانت میں گیارہ جون تک توسیع کردی،عدالت میں جہانگیر ترین،علی ترین،رانا نسیم اور عامر وارث کی حاضری مکمل کی،عدالت نے جہانگیر ترین کی عبوری ضمانت مدت ختم ہونے پر طلب کر رکھا ہے،گزشتہ روز بینکنگ عدالت کے جج امیر محمد خان کے تبادلے کے باعث کیس کی سماعت نہیں ہو سکی،ایف آئی اے نے جہانگیر ترین ان کے بیٹے علی ترین، داماد اور دیگر فیملی ممبران کے خلاف سوا تین ارب روپے کے مالیاتی فراڈ پر مقدمہ درج کر رکھا ہے،ایف آئی اے کے مطابق جہانگیر ترین نے اپنے داماد کی کاغذ بنانے والی بند فیکٹری فاروقی پلپ کمپنی کے اکاؤنٹ میں جی ڈی ڈبلیو کمپنی سے سوا تین ارب منتقل کئے،دوسری جانب جہانگیر ترین اور علی ترین کی درخواست ضمانت پر ایڈیشنل سیشن جج حامد حسین کی عدالت میں سماعت ہوئی، دوران سماعت عدالت نے ایف آئی اے کے ڈپٹی ڈائریکٹر سے استفسار کیا کہ گیارہ بارہ روز میں آپ نے کیا کیا ہے،ایف آئی ڈپٹی ڈائریکٹر نے کہا کہ تفتیشی افسر تبدیل ہو گئے ہیں،فاضل جج نے کہا کہ کس طرح اچانک تبدیل کر دیا گیا،ایف آئی ڈپٹی ڈائریکٹر نے کہاپورے پنجاب میں تبادلے ہوئے ہیں،فاضل جج نے کہا کہ یہ معاملہ کب سے چل رہا ہے ابھی تک کیوں تحقیقات مکمل نہیں کی گئیں،اگر آپکا ادارہ تفتیش نہیں کرنا چاہتا تو بتائے،ڈپٹی دائریکٹر نے کہا ہم اس کیس پر حتمی دلائل کے لیے تیار ہیں،جہانگیر ترین کے وکیل نے کہا کہ اتنا وقت گزر گیا اس کیس کو سمجھنے میں،نئے تفتیشی آفیسر اب اسے نئے سرے سے تفتیش شروع کرے گا،مسلسل تفتیش میں شامل ہو رہے ہیں،فاضل جج نے کہا کہ پچھلے دنوں میں تقرر و تبادلے ہوئے ہیں،نئے جج آج چارج لے لیں گے،آج کیس کو بغیر سماعت ملتوی کر رہے ہیں۔سیشن کورٹ میں پیشی کے بعد جہانگیر ترین نے میڈیا سے گفتگوکرتے ہوئے کہا کہ علی ظفر نے تحقیقات مکمل کرلی ہیں،اطلاع ہے کہ رپورٹ میرے لئے مثبت ہے حکومتی ذمہ دار سے کوئی ملاقات نہیں ہوئی،جہانگیر ترین نے مزید کہا کہ ہر بار نئی تاریخ مل جاتی ہے کوئی کاروائی نہیں ہورہی انصاف جب تاخیر کا شکار ہو تو انصاف نہیں ملتا انصاف کی فراہمی کو یقین بنایا جائے بے قصور ہیں علی ظفر کی رپورٹ منظر عام پر آنی چاہیے۔ہمارے خلاف سیاست نہ کی جائے،جہانگیر ترین نے کہا کہ میرا دامن صاف ہے احتساب سے گھبرانے والا نہیں ہوں۔

جہانگیر ترین 

مزید :

صفحہ آخر -