ایس پی ڈیفنس ڈویژن کو ریکارڈ سمیت پیش ہونے کی ہدایت 

ایس پی ڈیفنس ڈویژن کو ریکارڈ سمیت پیش ہونے کی ہدایت 

  

 لاہور(نامہ نگار)چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ مسٹر جسٹس محمد قاسم خان نے اراضی پر قبضہ کیس کی سماعت2جون تک ملتوی کرتے ہوئے ایس پی ڈیفنس ڈویژن کو ریکارڈ سمیت عدالت میں پیش ہونے کی ہدایت کردی،فاضل جج نے دوران سماعت ایس پی کینٹ پر برہمی کااظہا کرتے ہوئے کہا کہپولیس والوں کے جائیدادوں کے معاملے پر اپنے مفادات ہوتے ہیں، جب تک کسی ایس پی کے سٹار نہیں اتریں گے یہ نہیں سدھریں گے، کینٹ کے رہائشی غلام حسین کی پولیس ہراسگی کے خلاف درخواست پر سماعت شروع ہوئی تو درخواست گزار کے وکیل نے موقف اختیار کیاکہ عدالتی حکم کے باوجود ایس پی کینٹ اراضی کے معاملہ پر مداخلت کررہے ہیں جو غیر قانونی اقدام ہے دوران سماعت ایس پی کینٹ نے عدالت میں پیش ہوکربتایا کہ انہوں نے عدالتی احکامات کی خلاف ورزی نہیں کی،فاضل جج نے مذکورہ پربرہمی کااظہارکرتے ہوئے کہا کہ ایس پی کے اسٹار اتریں گے تو سب ٹھیک ہو جائے گا،سول عدالت میں معاملہ زیر التوا ہونے کے باوجود پولیس نے مداخلت کی،میں نے تمہارے خلاف لکھنا ہے چھوڑوں گا نہیں، اگر تم نے قانون کے مطابق کام کیا ہوگا تو شاباش دوں گا،فاضل جج نے مزید کہاکہ بڑے شیروں میں ڈی پی اوز جان بوجھ کر اراضی والے معاملات میں مداخلت کرتے ہیں،پلاٹ یا کسی جائیداد کا معاملہ آ جائے تو پولیس والوں کے مفادات وابستہ ہوتے ہیں،پلاٹ کا معاملہ ہو تو چیونٹی ان کے  پاؤں کے نیچے آ جاتی ہے،درخواست گزارنے تھانہ ہیئر کی حدود میں مکان خریدا، دوسری پارٹی کے قبضے کیخلاف پولیس سے رجوع کرتے ہوئے موقف اختیارکیا ہے کہ پولیس نے داد رسی کی بجائے مجھے ہی ہراساں کرنا شروع کر دیا، عدالت سے استدعاہے کہ پولیس کو ہراساں کرنے سے روکا جائے۔

ملتوی 

مزید :

صفحہ آخر -