فضائی حادثات میں جاں بحق ہونے والوں کے رشتے داروں کو بین الاقوامی قوانین کے مطابق کتنی رقم ملتی ہے، جانئے وہ بات جو آپ کو معلوم نہیں

فضائی حادثات میں جاں بحق ہونے والوں کے رشتے داروں کو بین الاقوامی قوانین کے ...
فضائی حادثات میں جاں بحق ہونے والوں کے رشتے داروں کو بین الاقوامی قوانین کے مطابق کتنی رقم ملتی ہے، جانئے وہ بات جو آپ کو معلوم نہیں

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

نیویارک (نیوز ڈیسک) سڑک پر حادثاتی موت کا شکار بننے والے افراد کے لواحقین کو امدادی رقوم یا زر تلافی دینے کے لئے تو کوئی بین الاقوامی ضابطہ یا قانون موجود نہیں، البتہ فضائی حادثات کا شکار بننے والے افراد کے لواحقین کو بھاری رقوم بطور زرتلافی ادا کرنے کے بین الاقوامی معاہدے ضرور موجود ہیں۔ نیوز سائٹ NZHerald کے مطابق فضائی حادثے میں ہلاک ہونے والے ہر شخص کے لواحقین کو بین الاقوامی معاہدے کے تحت ایک لاکھ 60 ہزار امریکی ڈالر (تقریباً ایک کروڑ ساٹھ لاکھ پاکستانی روپے ) کی ادائیگی لازم ہے۔

زرتلافی کے حصول کی خاطر لواحقین کے پاس مقدمہ دائر کرنے کیلئے دو سال کا وقت ہوتا ہے۔ عموماً متعدد مسافروں کے لواحقین مشترکہ طورپر قانونی کارروائی کا آغاز کرتے ہیں، جس میں ائیرلائن کی غلطی ثابت ہونے پر جرمانے یا زرتلافی کی ادائیگی ضروری ہوتی ہے۔ عموماً یہ رقوم انشورنس کمپنیاں ادا کرتی ہیں ، کہ جن کی طرف سے ائیرلائن کے جہازوں کی انشورنس کی گئی ہوتی ہے۔ لواحقین بین الاقوامی معاہدوں کے مطابق طے شدہ ایک لاکھ 60 ہزار ڈالر کے علاوہ اضافی ہرجانے یا زرتلافی کے لئے بھی مقدمہ دائر کر سکتے ہیں۔

دوسال قبل لاپتہ ہونیوالی ملائیشیا کی پرواز MH370 کے239 مسافروں کے لواحقین بھی ملائیشیا ائیرلائن کے خلاف قانونی کارروائی کا آغاز کر چکے ہیں۔ امریکی میڈیا کے مطابق تقریباً ڈیڑھ سو مسافروں کے لواحقین نے ایک امریکی لاءکمپنی کے ذریعے مقدمات دائر کیے ہیں۔ کمپنی کے قانونی ماہرین نے توقع ظاہر کی ہے کہ وہ ملائیشین ائیرلائن سے زرتلافی کے حصول میں کامیاب رہیں گے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس