’میری بیگم اور بیٹی ہیں لیکن۔۔۔‘ دبئی میں پاکستانی ٹیکسی ڈرائیور کو غیر ملکی نوعمر لڑکی کے ساتھ شرمناک حرکت بہت مہنگی پڑگئی

’میری بیگم اور بیٹی ہیں لیکن۔۔۔‘ دبئی میں پاکستانی ٹیکسی ڈرائیور کو غیر ...
’میری بیگم اور بیٹی ہیں لیکن۔۔۔‘ دبئی میں پاکستانی ٹیکسی ڈرائیور کو غیر ملکی نوعمر لڑکی کے ساتھ شرمناک حرکت بہت مہنگی پڑگئی

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

ابوظہبی (مانیٹرنگ ڈیسک) متحدہ عرب امارات میں ایک پاکستانی ڈرائیور شرمناک الزامات کی زد میں آکر بہت بڑی مصیبت میں پھنس گیا ہے۔ ”گلف نیوز“ کے مطابق جنوبی افریقہ سے تعلق رکھنے والی 15سالہ لڑکی نے الزام عائد کیا ہے کہ پاکستانی ڈرائیور نے شرافت کا بہروپ بھر کر اسے جنسی دست درازی کا نشانہ بنا ڈالا۔ 

لڑکی کا کہنا ہے کہ اس نے اپنی دوست کے گھر سے اپنے گھر واپس جانے کے لئے ڈرائیور کی خدمات حاصل کی تھیں۔ اس نے پولیس کو بتایا کہ البرشا کے علاقے میں واقعے اس کے گھر کی طرف سفر کے دوران ڈرائیور نے ذاتی نوعیت کے سوالات پوچھنے شروع کردئیے۔ متاثرہ لڑکی نے بتایا کہ وہ ان سوالات سے ہی کافی پریشان تھی کہ بات مزید آگے بڑھ گئی اور ڈرائیور نے اسے کہا کہ گود میں رکھا ہوا بیگ اٹھا کر پچھلی سیٹ پر رکھ دو۔ الزامات کے مطابق جب لڑکی نے انکار کیا تو ڈرائیور نے بیگ خود اٹھا کر پچھلی سیٹ پر رکھ دیا، اور اس دوران لڑکی کے جسم کو قابل اعتراض انداز میں چھوا۔

متاثرہ لڑکی کا کہنا ہے کہ اس نے ڈرائیور کو فوری طور پر اپنی دوست کے گھر کی طرف واپس جانے کو کہا اور جونہی گاڑی رکی تو وہ اتر کر اندر کی طرف بھاگی اور رو رو کر اپنا حال اپنی دوست کو سنا دیا۔ اسی دوران سہیلی کے والد اور بھائی نے ٹیکسی ڈرائیور کو قابو کرلیا اور پولیس کے آنے تک اسے پکڑے رکھا۔

ڈرائیور نے عدالت میں موقف اختیار کیا کہ اس نے لڑکی کے ساتھ ہرگز کوئی چھیڑخانی نہیں کی، البتہ غلطی سے اس کا ہاتھ لڑکی کے کندھے سے چھوگیا تھا جس پر اس نے معذرت بھی کی۔ مقدمے کی کارروائی جاری ہے اور عدالت کی طرف سے 30 مارچ کو فیصلہ متوقع ہے۔

مزید : عرب دنیا