خواتین ڈاکٹروں کو بلیک میل کرنے کے مقدمہ کی سماعت 12مارچ تک ملتوی

خواتین ڈاکٹروں کو بلیک میل کرنے کے مقدمہ کی سماعت 12مارچ تک ملتوی

لاہور(نامہ نگار)انسداد دہشت گردی کی عدالت نے فیس بک اور انٹرنیٹ کے ذریعے میو ہسپتال کی 200سے زائد خواتین ڈاکٹروں کو بلیک میل کرنے کے اوران سے بھتہ وصول کرنے کے مقدمہ میں ملوث ملزم عبدالوہاب علوی کے کیس کی سماعت 12مارچ تک ملتوی کرتے ہوئے استغاثہ کے مزیدگواہوں کو شہادتوں کے لئے طلب کر لیاہے۔ انسداد دہشت گردی کی عدالت کے جج خواجہ ظفر اقبال نے کیس کی سماعت کی۔

تھانہ گوالمنڈی پولیس نے ملزم عبدالوہاب کو ہتھکڑیاں لگا کر سخت سکیورٹی میں عدالت کے روبرو پیش کیا۔ملزم کی جانب سے عدالت کو آگاہ کیا کہ پولیس نے میڈیا کے دباو پر اسکے خلاف درج مقدمے میں دہشت گردی کی دفعات عائد کر رکھی ہیں۔ینگ ڈاکٹرز ایسویسی ایشن کے سیکرٹری ڈاکٹر سلمان کاظمی نے عدالت کو بتایا کہ کہ ملزم عبدالواہاب علوی نے فیس بک اور انٹرنیٹ کے ذریعے خواتین ڈاکٹروں کو ہراساں کیا جس کے باعث درجنوں خواتین ڈاکٹرز پیشہ چھوڑنے پر مجبور ہو گئیں۔

پولیس کے گواہ سب انسپکٹر اشرف بسرا نے اپنا بیان عدالت کے روبرو قلمبند کراتے ہوئے بتایا کہ ملزم کی نازیبا حرکات کی بناء پر کئی خواتین ڈاکٹرز کے رشتے ٹوٹ گئے جبکہ ملزم ڈاکٹر ز کو بلیک میل کر کے بھتہ بھی وصول کرتا رہاہے، عدالت نے استغاثہ کے مزیدگواہوں کوآئندہ سماعت پر شہادتوں کے لئے طلب کر لیاہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4