پنجاب ریونیو اتھارٹی ایکٹ کی نئی ترمیم بھی چیلنج ،ہائی کورٹ نے چیف سیکرٹری اور سیکرٹری قانون سے جواب مانگ لیا

پنجاب ریونیو اتھارٹی ایکٹ کی نئی ترمیم بھی چیلنج ،ہائی کورٹ نے چیف سیکرٹری ...
پنجاب ریونیو اتھارٹی ایکٹ کی نئی ترمیم بھی چیلنج ،ہائی کورٹ نے چیف سیکرٹری اور سیکرٹری قانون سے جواب مانگ لیا

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

لاہور(نامہ نگار خصوصی )پنجاب ریونیو اتھارٹی ایکٹ کی نئی ترمیم لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج کر دی گئی۔ اس سلسلے میں دائر درخواست پر مسٹر جسٹس سید منصور علی شاہ نے چیف سیکرٹری اور سیکرٹری قانون سے جواب طلب کر لیاہے۔درخواست گزار انجینئر ننگ کمپنی کی طرف سے ناصر محمود ایڈووکیٹ نے موقف اختیار کیا کہ حکومت نے پنجاب ریونیو اتھارٹی ایکٹ میں ترمیم کر کے دفعہ پانچ اور ذیلی دفعہ چار شامل کی ہیںجن کے تحت اتھارٹی کے تمام اختیارات چیئرپرسن کو دے دیئے گئے ہیں جبکہ ایکٹ میں موجود دفعہ 3( اے) کہتی ہے کہ اتھارٹی سے مراد چیئرپرسن اور چار ممبران ہیں تاہم ترمیم کے بعد بھی پنجاب ریونیو اتھارٹی کے ممبران کی تقرری نہیں کی گئی، انہوں نے مزیدموقف اختیار کیا کہ یہ دونوں دفعات ایک دوسرے سے متصادم ہیں ،ایکٹ کی دفعہ 5کو غیرقانونی قرار دیا جائے، عدالت نے چیف سیکرٹری پنجاب اور سیکرٹری محکمہ قانون کو نوٹس جاری کرتے ہوئے 14مارچ تک جواب طلب کر لیاہے۔

مزید : لاہور