شہبازشریف کیلئے نئی پریشانی، پیپلزپارٹی کے بعدایم کیوایم نے کابینہ کا حصہ نہ بننے کا فیصلہ کرلیا

شہبازشریف کیلئے نئی پریشانی، پیپلزپارٹی کے بعدایم کیوایم نے کابینہ کا حصہ ...
شہبازشریف کیلئے نئی پریشانی، پیپلزپارٹی کے بعدایم کیوایم نے کابینہ کا حصہ نہ بننے کا فیصلہ کرلیا

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


 

 اسلام آباد (ویب ڈیسک) پاکستان پیپلز پارٹی کے بعد حکومت کی اتحادی جماعت ایم کیو ایم نے بھی اپنے بعض تحفظات کے پیش نظر وفاقی کابینہ میں شامل نہ ہونے کا فیصلہ کیا ہے  تاہم انہوں نے یہ یقین دہانی کرائی ہے کہ حل طلب معاملات پر پیپلز پارٹی سے بات چیت جاری رہے گی لیکن فی الوقت ڈیڈلاک برقرار ہے۔

روزنامہ جنگ کے ذرائع کے مطابق ایم کیو ایم  سپیکر ، وزیراعظم کیلئے ووٹ دینے کو تیار ہے تاہم چیئرمین سینیٹ اور صدرکو ووٹ دینے پر آمادہ نہیں،ایم کیو ایم کی جانب سے یہ موقف سامنے آنے کے بعد حکومتی اتحاد کی جماعتوں کے زعماء نے فوری طور پر ایم کیو ایم کے رہنماؤں سے ملاقات کی جن میں حکومتی اتحاد کے ارکان میں سردار ایاز صادق، یوسف رضا گیلانی، خورشید شاہ، عبدالعلیم خان، خالد مگسی اور دیگر شامل تھے جبکہ ایم کیو ایم کے رہنماؤں میں کنوینر خالد مقبول صدیقی ، فاروق ستار اور دیگر شامل تھے۔

 ذرائع کے مطابق ایم کیو ایم کا مطالبات تسلیم ہونے تک وفاقی کابینہ کا حصہ نہ بننے کا فیصلہ کر لیا ، تاہم ایم کیو ایم آج  قومی اسمبلی کے سپیکر اور ڈپٹی سپیکر کے انتخاب میں اپنا ووٹ سپیکر کو دے گی، جبکہ وزیراعظم کیلئے ووٹ دینے کیلئے بھی تیار ہے۔ ذرائع کے مطابق چیئرمین سینیٹ اور صدر کے انتخاب میں ووٹ دینے پر آمادہ نہیں، ایم کیوایم نے مسلم لیگ (ن) کو اپنے فیصلہ سے آگاہ کردیا جبکہ مسلم لیگ (ن) کا کہنا ہے ایم کیو ایم کے ساتھ بات چیت جاری ہے، معاملات کا حل نکال لیں گے۔

مزید :

سیاست -قومی -