لاہور ہائیکورٹ نے 4 سالہ بچہ باپ سے لیکر ماں کے حوالے کر دیا

لاہور ہائیکورٹ نے 4 سالہ بچہ باپ سے لیکر ماں کے حوالے کر دیا

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے 4 سالہ بچہ باپ سے لے کر ماں کے حوالے کر دیا، عدالتی فیصلہ سنتے ہی باپ اور دادی نے احاطہ عدالت میں دھاڑیں مار کر رونا شروع کر دیا۔جسٹس فیصل زمان خان نے سے خاتون سدرہ کی طرف سے دائر حبس بیجا کی درخواست کی سماعت کی، درخواست گزار کے وکیل نے موقف اختیار کیا کہ اسکے 4 سالہ بیٹے حمزہ کو اسکے باپ فیصل رضا نے حبس بیجا میں رکھا ہوا ہے اور اس سے ملنے کی اجازت بھی نہیں دے رہا، عدالت بچے کو برآمد کرنے اور ماں کے حوالے کرنے کا حکم جاری کرے، فیصل آباد پولیس نے 4سالہ حمزہ اور باپ کو عدالت میں پیش، بچے کا والد نے عدالت بتایا کہ اسکی بیوی دانستہ طور پر حالات خراب کر رہی ہے، پہلے بھی دو بچے اسکی بیوی نے زبردستی چھین رکھے ہیں اور انہیں باپ سے ملاقات کی اجازت نہیں دی جاری، دلائل سننے کے بچے کو ماں کے حوالے کر دیا، عدالتی فیصلہ سنتے ہیں بچے کے باپ اور دادی نے احاطہ عدالت میں دھاڑیں مار کر رونا شروع کر دیا، بچے کے والد کا کہنا تھا کہ وہ اپنے بیٹے کے بغیر نہیں جی سکتا، عدالت نے ماں باپ کو دوبارہ 5 مئی کیلئے طلب کیا ہے

بچہ حوالے

مزید : صفحہ آخر