نسٹ نے پہلے انٹلیکچوئل پراپرٹی لائسنسنگ معاہدے پر دستخط کردےئے

نسٹ نے پہلے انٹلیکچوئل پراپرٹی لائسنسنگ معاہدے پر دستخط کردےئے

اسلام آباد ( پ ر)نیشنل یونیورسٹی آف سائنسز اینڈ ٹیکنالوجی، نسٹ نے پاکستانی ٹینریز سیکٹر میں استعمال ہونے والے فلیشنگ اور شیونگ بلیڈز سے متعلق سند کو دو آئی پی آر لائسنس دے دےئے ہیں ۔پرل کانٹینینٹل لاہور میں منعقدہ ایک خصوصی تقریب میں لاہور نسٹ اور ایم ایس شفیع ریزو کیمیکل (ایس آر سی ) کے درمیان لائسنسنگ معاہدے پر دستخط کئے گئے ۔آئی پی کے انوینٹر کا نسٹ کالج آف الیکٹریکل اینڈ مکینیکل انجینئرنگ راولپنڈی سے تعلق ہے۔ ریکٹر نسٹ لیفٹیننٹ جنرل نوید زمان ہلال امتیاز (ملٹری)(ریٹائرڈ) کے علاوہ لاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر اور علاقے کے پچاس سے زائد صنعت کاروں نے تقریب میں شرکت کی۔ ڈائریکٹر نصر اکرام پرو ریکٹر ریسرچ ، انوویشن اور کمرشلائزیشن نسٹ اور سی ای او ، ایس آر سی مسٹر ابرار احمد نے معاہدے پر دستخط کئے۔ پاکستان میں تقریباً 150چمڑے کی پروسیسنگ فرمیں ہیں جن میں سے ہر فرم فلیشنگ اور شیونگ بلیڈ کی درآمد پر سالانہ تقریباً 50لاکھ روپے خرچ کرتی ہے جو 750ملین روپے سالانہ کی مارکیٹ ہے۔ مقامی طور پر معیاری بلیڈ زکی عدم دستیابی کی وجہ سے چمڑے کے مینوفیکچررز کے پاس کوئی چوائس نہیں ہے کہ وہ درآمد شدہ بلیڈز کو منتخب کریں۔ لائسنس کے معاہدے کے تحت ایس آر سی لاہور اب مقامی طور پر یہ بلیڈ تیار کرے گی۔ اس طرح معیاری مقامی بلیڈ ز کی تیاری سے قیمتوں میں کمی اور زرمبادلہ میں بچت ہوگی۔ اس موقع پر ریکٹر نسٹ نے یونیورسٹی اورصنعت کے درمیان صنعتی تحقیق اور جدیدیت کی اہمیت پر روشنی ڈالی ۔یہاں یہ بات خصوصیت کی حامل ہے کہ کسی پاکستانی یونیورسٹی کا انٹلیکچوئل پراپرٹی کا کسی صنعت کو منتقل کرنے کا یہ پہلا معاہدہ ہے

مزید : کامرس


loading...