پاکستانی معیشت کے حوالے سے بڑی خوشخبری

پاکستانی معیشت کے حوالے سے بڑی خوشخبری

پاکستان سرمایہ کاری بورڈ کے چیئرمین اور وزیر مملکت نعیم وائی زمیندار نے کہا ہے کہ اگلے دو سال کے دوران میں پاکستان کاروباری سہولتیں ترجیحی طور پر مہیا کرنے والے 50بہترین ملکوں میں شامل ہو جائے گا۔ اس وقت معاشی سہولتیں مہیا کرنے والے ملکوں کی تعداد 190ہے اور پاکستان کا 147واں نمبر ہے۔ عالمی سروے کے نتائج اس لحاظ سے حوصلہ افزا ہیں کہ انٹرنیشنل سٹینڈرڈ کی حامل اقتصادی سہولتوں میں اضافہ ہو رہا ہے۔ کراچی کو کاروبار کے لئے شکاگو کے مقابلے میں بہترین شہر قرار دیا گیا ہے۔ ورلڈ بینک کی تازہ ترین رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ سی پیک کے منصوبوں پر تیزی سے عملدرآمد ہو رہا ہے، اور ان کے مثبت اور حیران کن اثرات تمام طبقوں پر مرتب ہوں گے۔ اقتصادی ماہرین کی رائے ہے کہ 2020ء میں پاکستان ان پچاس ملکوں میں شامل ہونے کے لئے پُرعزم ہے جو کاروبار کے لئے معیاری سہولتیں مہیا کرتے ہیں۔ حوصلہ افزا بات یہ ہے کہ کراچی اور دیگر شہروں میں اب امن و امان کی صورت حال اطمینان بخش ہے۔ پی ایس ایل کا فائنل میچ کراچی میں نہایت پرامن ماحول میں بڑی خوش اسلوبی سے منعقد ہوا ۔ اس سے پہلے دو سیمی فائنل میچ لاہور میں بھی ہوئے، سیکیورٹی فورسز نے مثالی حفاظتی انتظامات کو یقینی بنایا، یہ بات فخریہ کہی جا رہی ہے کہ اقتصادی ترقی کا پہیہ پھر سے رواں دواں ہے۔ سی پیک کے منصوبے عالمی معیار کے حامل ہیں، ان کی تکمیل سے پاکستان کی معیشت مضبوط اور ترقی یافتہ ہوگی۔دنیا کی بڑی معیشتوں میں پاکستان کی شمولیت کوئی معمولی اعزاز نہیں ہوگا، اللہ کے فضل و کرم سے ملک بھر میں طویل لوڈشیڈنگ کے عذاب سے نجات حاصل کر لی گئی ہے۔ اب گیس اور بجلی کے ذریعے صنعتی کاروباری اور تجارتی سرگرمیاں تیزی سے جاری ہیں۔ اس وجہ سے معیشت پر بہت اچھے اثرات مرتب ہوئے ہیں۔ خوش آئند امر یہ بھی ہے کہ گزشتہ دو برسوں کے دوران چین، ترکی، جرمنی، برطانیہ سمیت کئی ملکوں کے نجی سرمایہ کاروں نے پاکستان کا رخ کیا ۔ یہ سب پُرامن حالات کی وجہ سے ممکن ہوا ہے۔ معیشت کے حوالے سے اصل اہمیت سی پیک منصوبوں اور عظیم دوست ملک چین کی حمایت کو حاصل ہے۔ چین نے امریکہ اور بھارت کی سازشوں کا ڈٹ کر مقابلہ کرنے کا عملی ثبوت دیا ہے۔ مخالف قوتوں کو بھی سی پیک منصوبوں میں شامل ہو کر عالمی ترقی اور معاشی استحکام کی دوڑ میں شامل ہونے کی دعوت دی ہے۔ خدا کرے کہ 2020ء تک ہمیں مستحکم اور آسانیاں مہیا کرنے والے ملکوں میں شامل ہونے کا اعزاز حاصل ہو جائے۔

مزید : رائے /اداریہ


loading...