فاروق ستار نے بھی چار مئی کو لیاقت آبا د میں جلسے کا اعلان کر دیا

فاروق ستار نے بھی چار مئی کو لیاقت آبا د میں جلسے کا اعلان کر دیا

کراچی ( خصوصی رپورٹ )کراچی میں ایم کیو ایم پاکستان اور پیپلز پارٹی آمنے سامنے آگئے ہیں، ایم کیو ایم بہادر آباد نے ٹنکی گراؤنڈ پر پیپلز پارٹی کے جلسے کو جلسی قرار دے دیا ہے۔ پی آئی بی گروپ کے فاروق ستار نے کہا ہے کہ ہمارے ہی ٹیکسوں سے ہمیں بھیک دی جارہی ہے، شہری علاقوں کو دیوار سے لگایا نہیں گیا بلکہ دیوار میں چنوادیا گیا۔فاروق ستار نے بھی 4 مئی کو ٹنکی گراؤنڈ میں ہی جلسہ کرنے کا اعلان کردیا ہے۔ فاروق ستار نے بلاول بھٹو کے لیاقت آباد جلسے پر ردعمل جاری کرتے ہوئے پیپلز پارٹی کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا۔میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے فاروق ستار نے کہا کہ ’ پیپلزپارٹی نے لیاقت آباد ٹنکی گراؤنڈ پر جلسہ کیا، پیپلز پارٹی کے رہنماؤں نے جو کہا وہ سب نے سنا، بلاول بھٹو زرداری یا بلاول زرداری بھٹو کو آئینہ دکھانا ضروری ہے‘۔فاروق ستار نے کہا کہ کسی زبان کو صوبائی یا قومی زبان بنانے کے ہم خلاف نہیں لیکن اردو کی قیمت پر کسی زبان کو قومی زبان بنانے کے حق میں بھی نہیں ۔ اردو کو رابطہ اور انتظام کی زبان کے طور پر ختم کیا جارہا تھا، اس پراردو بولنے والوں نے احتجاج کیا جس میں شہادتیں بھی ہوئی، جولائی 1972 میں سرکاری سرپرستی میں فسادات کرائے گئے، رئیس امروہی کو یہ کہنا پڑا تھا کہ اردو کا جنازہ ہے ذرا دھوم سے نکلے۔فاروق ستار نے کہا کہ بلاول بھٹو کو شہدا ئےِ اردو کے ورثا سے معافی مانگنی چاہیے۔ فاروق ستار نے کہا کہ پیپلز پارٹی نے لیاقت آباد میں جو جلسہ کیا وہ ہمارے وسائل سے کیا گیا، طاقت سے قبضہ تو کیا جاسکتا ہے لیکن دلوں میں نہیں اترا جاسکتا۔ 30 سال میں پیپلز پارٹی کی حکومت میں فنڈز نہیں دیئے گئے، کوٹہ سسٹم نافذ کیا گیا جو توسیع نہ ہونے کے باجود آج تک قائم ہے، کوٹہ سسٹم کے ذریعے ہماری جائز ملازمتیں لے لی گئیں، کالجوں میں داخلوں پر پابندی لگائی گئی۔فاروق ستار نے کہا کہ مردم شماری میں بھی وفاق کے ساتھ مل کر ہماری آبادی کو کم کیا گیا، سینیٹ میں ہمارے حق نمائدنگی کو چھینا گیا، سب سازشوں میں پیپلز پارٹی شریک رہی۔ ہمارے ٹیکسوں سے ہمیں ہی بھیک دی جارہی ہے، شہری علاقوں کو دیوار سے نہیں لگایا گیا بلکہ دیوار میں چنوایا گیا۔ سندھ کے شہروں کی سیٹیں چھیننے کے لیے پیسہ پانی کی طرح بہایا جارہا ہے، نفرتوں کے بیج سے پھل بھی نفرت کے نکلیں گے، بلاول بھٹو بتائیں کہ لوگوں کے دلوں کو جیتنا ہے یا قبضہ کرنا ہے۔ راؤ انوار کا مقدمہ اوپن کورٹ میں چلنا چاہیے، عزیر بلوچ کو عدالتوں میں پیش کیا جائے، ہم لوٹی ہوئی ایک ایک پائی واپس لیں گے۔

فاروق ستار

مزید : صفحہ آخر


loading...