علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی کوھاٹ کیمپس کا تعمیراتی منصوبہ سردخانے کی نذر

علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی کوھاٹ کیمپس کا تعمیراتی منصوبہ سردخانے کی نذر

کوھاٹ (بیورو رپورٹ) علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی کوھاٹ کیمپس کا تعمیراتی منصوبہ سردخانے کی نذرہو گیا 2012 میں منظور ہونے والے اس اہم منصوبے پر کام کا آغاز نہ ہونا سمجھ سے بالاتر ہے ان خیالات کا اظہار سابقہ صوبائی وزیر سید قلب حسن نے میڈیا نمائندوں کے ساتھ غیر رسمی گفتگو کے دوران کیا انہوں نے بتایا کہ سال 2012-13 میں علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی کوھاٹ کیمپس کا جرما کے مقام پر باقاعدہ سنگ بنیاد رکھا گیا تھا جس میں اوپن یونیورسٹی کے اعلیٰ افسران نے خصوصی طور پر اسلام آباد سے آ کر شرکت کی تھی اس تقریب میں اوپن یونیورسٹی کے صوبائی اور مقامی ذمہ داروں کے علاقہ اساتذہ کرام کی بھی بڑی تعداد موجود تھی جنہوں نے اس منصوبے کو نہ صرف کوھاٹ ڈویژن بلکہ جنوبی اضلاع کے ہزاروں طلباء اور طالبات کے لیے نہایت اہم قرار دیا تھا مگر افسوس کے اس اہم منصوبے کو سردخانے کی نظر کر دیا گیا حالانکہ کیمپس کے تعمیراتی کام کے لیے چھ کروڑ روپے فنڈ بھی مختص کیا گیا تھا انہوں نے مزید کہا کہ اس وقت نہ صرف ضلع کوھاٹ بلکہ کوھاٹ ڈویژن میں اوپن یونیورسٹی کے ہزاروں سٹوڈنٹس مختلف امتحانات میں شریک ہوتے ہیں جن کے لیے کوھاٹ کیمپس کی تعمیر کا منصوبہ بنایا گیا تھا انہوں نے اس عزم کا اظہار کیا کہ اگر انہیں اللہ تعالیٰ نے دوبارہ موقع دیا اور وہ الیکشن میں کامیاب ہوئے تو کوھاٹ میں علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی کا جدید کیمپس تعمیر کروانے کا منصوبہ مکمل کروائیں گے تاکہ طلباء و طالبات کے ساتھ ساتھ اساتذہ کرام اور اوپن یونیورسٹی کے ملازمین کو بھی تمام سہولیات میسر ہو سکیں۔

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...