آن لائن کاروبار کا فیصلہ ناقابل عمل، چھوٹے تاجروں کے ساتھ نا انصافی ہے: محمد حسین محنتی

      آن لائن کاروبار کا فیصلہ ناقابل عمل، چھوٹے تاجروں کے ساتھ نا انصافی ہے: ...

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر)جماعت اسلامی سندھ کے امیر وسابق ایم این اے محمد حسین محنتی نے کہا ہے کہ سندھ حکومت کا آن لائن کاروبار کا فیصلہ قابل عمل نہیں ہے، کورونا سے بچتے ہوئے جینا سیکھنا پڑے گا، کاروبار کے بغیر دنیا نہیں چل سکتی، صوبائی اور وفاقی حکومتوں کی نوراکشتی میں عوام اور تاجر رل گئے ہیں، فیکٹریاں کھل سکتی ہیں تو پھر دکانیں کیوں نہیں کھل سکتی،حفاظتی اقدامات کو خاطر ملحوظ رکھتے ہوئے صوبائی وفاقی حکومت حکمت،تحمل اور افہام وتفہیم کے ساتھ کاروبار زندگی کو بحال کرنے کے اقدامات کریں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے قباء آڈیٹوریم میں آل پاکستان آرگنائزیشن آف اسمال ٹریڈرز اینڈ کاٹیج انڈسٹریز کراچی کے صدر محمود حامد کی زیر قیادت ملاقات کرنے والے تاجروں کے وفد سے بات چیت کے دوران کیا۔اسمال ٹریڈرز کے جنرل سیکرٹری عثمان شریف،نائب صدرسیدلیاقت علی،صوبائی سیکریٹری اطلاعات مجاہد چنا ودیگر بھی اس موقع پر موجود تھے۔ تاجروں کے وفد نے صوبائی امیر کو فریاد کرتے ہوئے کہا کہ کراچی کے چھوٹے تاجروں کے ساتھ بڑی ناانصافی ہورہی ہے، تاجر لاک ڈا?ن کی وجہ سے معاشی طور پر فاقہ کشی کا شکار ہوگئے ہیں، لاک ڈا?ن سے پولیس نے کرپشن کی انتہاکردی ہے، کرپشن کے نت نئے دروازے کھلنے کی وجہ سے چھوٹے تاجر دہری اذیت کا شکار ہیں، چھوٹے کاروبار کے مختلف دورانیہ طئے کرکے انہیں معاشی بدحالی سے بچایا جائے۔اس حوالے سے 19اپریل کو کمشنر آفس میں تاجروں کے ساتھ طے پانے والے ایس اوپیز پر عمل کرکے کاروبار کھولنے کی اجازت دی جائے تاکہ اپنی جانوں کی بھی حفاظت اور معیشت کا پہیہ بھی چل سکے۔ صوبائی امیر نے تاجروں کو اپنے مکمل تعاون کا یقین دلاتے ہوئے کہا کہ کراچی ملک کا معاشی حب ہے جس کے سیاسی ومعاشی اثرات پورے ملک پر پڑتے ہیں، یہ قومی آفت ہے جس نے پوری دنیا کو متاثر کیا ہے،یہ صرف ایک حکومت نہیں بلکہ پوری قوم کا امتحان ہے، حکمران آفت بننے کی بجائے تاجروں کے مسائل کو ترجیحی بنیادوں پر حل اور مرحلہ وار دکانیں کھولنے کی اجازت دی جائے، آئی جی سندھ اور وزیراعلیٰ محکمہ پولیس کی کرپشن اور تاجروں کو بلاجواز تنگ کرنے کا نوٹس لیں اور پولیس میں موجود اس طرح کی کالی بھیڑوں کیخلاف کاروائی کریں۔

مزید :

صفحہ اول -