پوری دنیا کو کورونا وائرس کی وجہ سے بے شمار چیلنجز کا سامنا ہے: عباس سرور قریشی

پوری دنیا کو کورونا وائرس کی وجہ سے بے شمار چیلنجز کا سامنا ہے: عباس سرور ...
پوری دنیا کو کورونا وائرس کی وجہ سے بے شمار چیلنجز کا سامنا ہے: عباس سرور قریشی

  

ریاض (وقار نسیم وامق) سعودی عرب میں بزمِ ریاض کی جانب سے کورونا وائرس کی روک تھام کے حوالے سے کی جانے والی کوششوں کے حوالے سے آن لائن معلوماتی سیشن منعقد ہوا جس میں بزمِ ریاض کے عہدیداروں اور ممبران سمیت دیگر اہم شخصیات نے بھی شرکت کی جبکہ فرانس میں سفارت خانہ پاکستان کے پولیٹیکل قونصلر عباس سرور قریشی نے خصوصی طور پر شرکت کرکے شرکاء سے کورونا وائرس کے پھیلاو کے حوالے سے مفید گفتگو کی.

اس موقع پر اپنی گفتگو کا آغاز کرتے ہوئے عباس سرور قریشی کا کہنا تھا کہ جب بھی دنیا پر مشکل وقت آتا ہے یا زلزلہ، طوفان، وباء کی صورت کوئی آفت یا غیر متوقع واقع رونما ہوتا ہے تو ہم ظاہری اسباب تلاش کرنے میں کوئی کسر نہیں چھورتے، مثال کے طور پر سائنسدان یہ تو کہتے ہیں کہ دنیا کا معرض وجود میں آنا بگ بینگ کا نتیجہ ہے لیکن بگ بینگ کیوں ہوا، آخرکار بگ بینگ کا بھی کوئی محرک تھا، ظاہری اسباب کی طرف توجہ کرتے ہوئے ہمیں غیر ظاہری اور غیبی محرکات اور نشاندہیوں پر بھی غور و فکر کرنا چاہئے اور اس غور و فکر میں قرآنِ کریم ہی ہمارا بہترین رہنما ہے.

شرکاء سے اپنے خطاب میں عباس سرور قریشی کا کہنا تھا کہ کورونا وائرس قدرت کی جانب سے ایک ایسا امتحان یے جو انسان کا اپنا پیدا کردہ ہے، قدرت نے کورونا وائرس کی شکل میں زلزلے، سیلاب اور سونامی سے کچھ مختلف مگر سخت آزمائش نازل کی ہے کیونکہ زمین پر ہماری کوتاہیوں اور بداعمالیوں کی وجہ سے انصاف ناپید اور ظلم کرنے والوں کا ظلم بڑھتا جا رہا ہے بحیثیتِ مسلمان ہمارا ایمان ہے کہ جب بھی اللہ سختی اور امتحان میں ڈالتا ہے تو اسکے پیچھے ہمارے ہاتھوں کے کئے گئے بداعمال کا بدلہ ہی ہوتا ہے، ہمارے معاشرے حقوق العباد اور حقوق اللہ سے عاری ہوتے جا رہے ہیں طاقتور کا ظلم بڑھتا جا رہا یے اور مظلوم کی مظلومیت اللہ کے عرش تک سنائی دے رہی ہے، دنیا بھر کے اندر ایسا نظام رائج کیا جاچکا یے جس سے حقوق کی پامالی ہورہی ہے.

عباس قریشی نے کہا کہ اگر ہم اپنے معاشرے کی ہی بات کریں تو ہمارے اندر ایسی بے پناہ خامیاں ہیں جن کو دور کرنا بہت ضروری ہے تاکہ ہم قدرتی آفات اور قدرت کی سختی سے بچ سکیں، اسی طرح اقوام عالم پر نظر دوڑائی جاے تو ہمیں نظر آتا یے کہ جہاں ترقی یافتہ ممالک ترقی پذیر ممالک کا استحصال کرتے ہیں جس سے ایسی تفریق پیدا ہوتی ہے کہ جس کو کبھی مٹایا نہیں جاسکتا، اسلام ہمارا خوبصورت دین یے جس میں اللہ کے رسول ﷺنے قرآن پاک کے ذریعے معاشروں کو رواداری، باہمی بھائی چارے اور عدل وانصاف جیسے اصولوں کے مطابق بنانے کا حکم دیا ہے مگر ہم اسکے برعکس چل رہے ہیں.

عباس سرور قریشی نے مزید کہا کہ کورونا وائرس ایک ایسی وباء یے جس نے پوری دنیا کو ہلا کر رکھ دیا ہے آج پوری دنیا کو کورونا وائرس کی وجہ سے بے شمار چیلنجز کا سامنا ہے اور اقتصادی اور معاشی بحران جنم لے رہے ہیں اب دنیا کا فرض بنتا ہے کہ جہاں وہ کورونا وائرس کے خاتمے کے لئے یکساں طور پر آگے بڑھے وہیں پر سائنسی میدان میں مشترکہ تعاون کرے، لوگوں کی فلاح و بہبود اور علم و تربیت کے مواقع فراہم کرے اور اقوام عالم میں امن قائم کرنے کی کوششوں کو تیز کرے تاکہ قدرت کو ہم پر ترس آجائے وگرنہ اللہ کا اس سے سخت عذاب بھی ممکن ہوسکتا ہے.

آن لائن کانفرنس میں نظامت کے فرائض بزم کے سیکریٹری جنرل وقار نسیم وامق نے ادا کئے جبکہ بزم کے صدر تصدق گیلانی، ریاض راٹھور، ڈاکٹر سعید احمد وینس، تنویر میاں اور دیگر نے بھی اظہار خیال کیا.

مزید :

عرب دنیا -تارکین پاکستان -