ایک تیر سے اتنے شکار، ان کا شوق ہے پیپلزپارٹی سے مقابلہ کرنا، تو کرو اور ہار و، دھاندلی کے ثبوت دیں ورنہ خاموش ہو جائیں: بلاول 

ایک تیر سے اتنے شکار، ان کا شوق ہے پیپلزپارٹی سے مقابلہ کرنا، تو کرو اور ہار ...

  

 کراچی(مانیٹرنگ ڈیسک،نیوزایجنسیاں)  چیئرمین پاکستان پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری این اے 249 ضمنی الیکشن میں دھاندلی کا شور مچانے والوں پر برس پڑے اور کہا کہ دھاندلی کے ثبوت ہیں تو سامنے لائیں ورنہ خاموش ہوجائیں۔ن لیگ کی نائب صدر مریم نواز پر تنقید کرتے ہوئے بلاول نے کہا کہ ان کا شوق ہے اپوزیشن سے اپوزیشن کرنا، ان کا شوق ہے پیپلز پارٹی سے مقابلہ کرنا، تو کرو  اور ہارو۔بلاول بھٹو نے دو ٹوک الفاظ میں کہا کہ کراچی میں ڈسکہ کی طرح نہ دھند تھی نہ پولنگ افسر غائب ہوئے، ڈسکہ ٹو کا شور مچانے والے بتائیں ڈسکہ کی طرح فائرنگ کہاں ہوئی؟ شاہد خاقان عباسی آر او آفس میں موجود تھے اور اپنی ہار دیکھ رہے تھے۔بلاول نے مزید کہا کہ کون سی جماعت مکمل سلیکٹڈ ہے؟ اور وہ اب ہمیں لیکچر دے گی، ن لیگ کے دوستوں کو شکست کو تسلیم کرنا سیکھنا چاہیے۔ بلاول نے کہا کہ اپوزیشن کی کنفیوز جماعتوں کو اپنا راستہ چننا ہوگا، اسٹیبلشمنٹ، پہلے سلیکٹڈ اور دوسرے سلیکٹڈ سب سے لڑنے کو تیار ہیں، پی ڈی ایم میں ایسے دوست ہیں جو عمران خان کو نہیں ہٹانا چاہتے۔  بلاول بھٹو زرداری  نے کہا ہے کہ عمران خان کو ایک ایسے بدترین حکمران کے طور پر یاد رکھا جائے گا جس نے کرپشن کو فروغ دیا۔ پاکستان پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے پی ٹی آئی حکومت کو ملکی تاریخ کی سب سے کرپٹ حکومت قرار دیتے ہوئے کہا کہ عمران خان ایمنسٹی انٹرنیشنل کی رپورٹیں لہرا کر سب کو کرپٹ کہتے تھے اور آج وہی ادارہ کہہ رہا ہے کہ پی ٹی آئی حکومت نے سب سے زیادہ لوٹ مار کی۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ شروع میں ہی حکومت کو بتادیا تھا کہ نیب اور معیشت ساتھ ساتھ نہیں چل سکتے مگر عمران خان نہیں مانے اور ملکی معیشت تباہ ہوگئی، عمران خان کو ایک ایسے بدترین حکمران کے طور پر یاد رکھا جائے گا جس نے احتساب کا نعرہ لگاکر کرپشن کو فروغ دیا۔کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری نے جسٹس قاضی فائز عیسی کیس کا فیصلہ آنے کے بعد صدر مملکت عارف علوی اور وزیر  قانون فروغ نسیم کے استعفے کا مطالبہ کر دیا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کیس کے فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہیں۔ معزز جج کی کردار کشی کرنیوالوں کے خلاف کارروائی ہونی  چاہیے۔بلاول بھٹو نے این اے 249 میں فتح پر ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ پیپلز پارٹی سے متعدد بار کامیابی چھینی گئی لیکن کراچی والوں نے سلیکٹڈ حکومت کو مسترد کردیا۔ پاکستان کی سیاست جمہوری قوتوں کی جانب بڑھ رہی ہے۔چیئرمین پیپلز پارٹی نے کہا کہ کراچی کے عوام نے ہمیں تاریخی کامیابی دلائی اور ثابت کیا کہ وہ حکومت کے ساتھ نہیں ہیں۔ عوام نے نااہل حکومت کو پیغام دے دیا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ کل کی جیت سیاست میں نئے رخ کا ثبوت ہے۔ پیپلز پارٹی عوامی مسائل حل کرے گی۔مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر کی تنقید کا جواب دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مریم نواز کا بیان غیر ذمہ دارانہ ہے۔ سب جانتے ہیں ملکی تاریخ میں سب سے زیادہ دھاندلی کس جماعت نے کی۔ الزام ثابت نہیں کیا جا سکتا کہ پیپلز پارٹی نے دھاندلی کی۔ شاہد خاقان، محمد زبیر اور مفتاح اسماعیل آر او دفتر میں موجود تھے۔دوسری جانب سوشل میڈیا پر جاری بیان میں بلاول کا کہنا تھا کہ ”ایک تیر سے اتنے شکار“۔اپنی ٹوئٹ میں یہ بھی لکھا کہ یہ شہر کراچی کس کا؟ بھٹو کا۔اس کے علاوہ بلاول بھٹو زرداری نے این اے 249 کا انتخابی نتیجہ اور پیپلز پارٹی کے بانی چیئرمین ذوالفقار علی بھٹو کی تصویر بھی شیئر کی جس میں وہ زیر تعمیر مزار قائد کے سامنے کھڑے ہو کر عوام سے خطاب کر رہے ہیں۔علاوہ ازیں سابق صدر آصف علی زرداری نے کراچی کے ضمنی انتخابات میں جیت پر جیالوں کو سلام پیش کیا۔ اپنے بیان میں انہوں نے کہاکہ کراچی والوں کا شکریہ،کراچی کے ضمنی انتخابات میں جیت پر جیالوں کو سلام۔ انہوں نے کہاکہ عبدالقادر مندوخیل کی جیت پیپلزپارٹی پر عوام کا اعتماد ہے،منتخب ایم این اے قادر مندوخیل حلقے کے عوام کی خدمت پر بھرپور توجہ دیں۔

بلاول بھٹو

مزید :

صفحہ اول -