مقبوضہ کشمیر کی دوحصوں میں تقسیم تسلیم کی نہ کرینگے: سردار مسعود خان 

  مقبوضہ کشمیر کی دوحصوں میں تقسیم تسلیم کی نہ کرینگے: سردار مسعود خان 

  



اسلام آباد(سٹاف رپورٹر)صدر آزاد جموں وکشمیر سردار مسعود خان نے بھارت کی طرف سے مقبوضہ جموں وکشمیر کو دو حصوں میں تقسیم کر کے لداخ اور جموں وکشمیر کو بھارتی یونین کا حصہ قرار دینے کے اقدام کی شدید مذمت کرتے ہوئے اسے عالمی قانون، اقوام متحدہ کی سلامتی کو نسل کی قراردادوں اور چوتھے جنیوا کنونشن کے منافی قرار دیدیا۔ صدر آزادکشمیر نے کہا کشمیری اس فیصلے کو تسلیم اس کیخلاف شدید مزاحمت کریں گے۔ یہ اقدام کشمیر کو بھارت کیساتھ زبردستی مدغم کرنے اور اسے اپنی کالونی بنانے کے مترادف ہے۔ جموں وکشمیر ہاؤس میں کشمیر یوتھ الائنس کے مجلس عاملہ کے اجلاس کی تقریب حلف برداری سے خطاب کرتے ہوئے انکامزید کہنا تھا کشمیر کی تاریخ میں آج ایک اور سیاہ دن کا اضافہ ہو گیا ہے جب بھارت نے مقبوضہ کشمیر میں نو آبادیاتی نظام، غیر ملکی قبضہ اور استعماری تسلط کا آغاز کر دیا ہے لیکن مقبوضہ جموں وکشمیر اور آزادکشمیر کے عوام، ریاست پاکستان بھارت کے اس اقدام کو تسلیم کرتے ہیں نہ کریں گے بلکہ اس کو بدلنے کیلئے جدوجہد کو مزید تیز تر کیا جائیگا۔ پانچ اگست کے بھارتی اقدامات کے بعد کشمیری نوجوانوں میں شدید غم و غصہ پایا جاتا ہے، آزادکشمیر کے نوجوان لائن آف کنٹرو ل کو عبور کر کے مقبوضہ جموں وکشمیر کے بھائیوں اور بہنوں کی مدد کرنا چاہتے ہیں، ہم ان کے اس جذبہ کی قدر کرتے ہیں لیکن نوجوانوں کو صبر وحکمت کا دامن نہیں چھوڑنا چاہیے اور سرکار دو عالم ؐ کے اسوۂ حسنہ کو ہمیشہ سامنے رکھنا چاہیے جنہوں نے غزوات اور جنگیں صرف مسلمانوں اور اسلامی ریاست کے دفاع کیلئے لڑیں۔ نوجوا ن اسوۂ حسنہ کی روشنی میں مخالفین سے غیر منطقی بحث و مباحثہ سے اجتناب کرتے ہوئے ان سے دور رہیں اور اپنی صفوں میں اتحاد و اتفاق کو قائم رکھیں۔ نوجوانوں میں جو لوگ انفارمیشن ٹیکنالوجی کے ماہر ہیں وہ دنیا بھر میں مسئلہ کشمیر پر شائع و نشر ہونیوالے مواد کو جمع اور سوشل میڈیا کے ذریعے اس مواد کو دوسروں تک منتقل کریں۔ نوجوان آزادکشمیر کی سرکاری جامعات اور دیگر تعلیمی اداروں میں نمائشیں منعقد کر کے نئی نسل کو تنازعہ کشمیر کے حقیقی تناظر سے آگاہ کریں۔ بھارت کی طرف سے آزادکشمیر پر حملہ کر کے قبضہ کرنا اور پاکستان کو ٹکڑے ٹکڑے کرنے کی دھمکیاں دینا ہندوتوا نظریے کا حصہ ہے جس کے تحت پورے بر صغیر کو ہندو علاقہ قرار دیا جاتا ہے اور مسلمانوں و دیگر مذاہب کے لوگوں کو ملیچھ یا غیر ملکی سمجھا جاتا ہے۔ نوجوانوں کا کشمیر کیلئے جذبہ دیکھ کر انہیں نہایت مسرت ہوئی ہے کیونکہ نوجوان محاذ کشمیر کے صف اول کے سپاہی ہیں۔ نوجوانوں کو اب ہر محاذ پر پہلے سے زیادہ توانائی کیساتھ بھارتی جارحیت کا مقابلہ کرنا ہو گا۔ صدر آزادکشمیر سردار مسعود خان نے کہا دنیا آج کشمیر کے حوالے سے پاکستان اور کشمیری عوام کے موقف کو تسلیم کر رہی ہے لیکن اسرا ئیلی اور بھارتی لابی کشمیر کو فلسطین کی طرز پر بھارتی کالونی بنانے کیلئے سرگرم ہے، کچھ امریکی سرمایہ کار بھی درپردہ مودی کیساتھ کھڑے ہیں مگر اس کے باوجود دنیا میں بھارت کی انسانی حقوق کی مسلسل خلاف ورزیوں کیخلاف آواز بلند کی جا رہی ہے۔ ایسے وقت میں کشمیر کے دونوں حصوں کے نوجوانوں کو حکمت و دانش کیساتھ اس کا مقابلہ کرنا ہے۔

سردار مسعود خان

مزید : صفحہ آخر