”فرمائشی مارچ“سے احتساب کا عمل کبھی نہیں رکے گا،ہمایوں اختر

  ”فرمائشی مارچ“سے احتساب کا عمل کبھی نہیں رکے گا،ہمایوں اختر

  



لاہور(نمائندہ خصوصی)پاکستان تحریک انصاف کے سینئر مرکزی رہنما و سابق وفاقی وزیر ہمایوں اختر خان نے کہا ہے کہ مولانافضل الرحمان کی جانب سے آزادی مارچ کے دوران احتساب کے جاری عمل پر کڑی تنقید سے بلی تھیلے سے باہر آ گئی ہے،جو لوگ ملک بھر میں قومی اور صوبائی اسمبلیوں کے حلقوں کی تعداد کے تناسب سے امیدوار سامنے نہیں لاسکتے وہ آج وزیراعظم سے استعفیٰ لینے کی بڑھکیں لگا رہے ہیں،پاکستان کو آگے بڑھتادیکھنے والے ایک طرف جبکہ اس کی راہ میں رکاوٹیں ڈالنے والا مافیا دوسری طرف ہے اور شکست ان کا مقدر بنے گی۔اپنے دفتر میں پارٹی رہنماؤں اورصحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے ہمایوں اختر خان نے کہاکہ کرپشن کی وجہ سے قانون کے شکنجے میں آنے والے اگر یہ سمجھ رہے ہیں کہ ان کے ”فرمائشی مارچ“ سے احتساب کا جاری عمل رک جائے گا تو یہ ان کی خام خیالی ہے۔ اب یہ طے ہو چکا ہے کہ کرپشن اور پاکستان ایک ساتھ نہیں چل سکتے او رکرپشن کے بیج کو اس دھرتی سے نا پید کر دیا جائے گا۔ انہوں نے کہاکہ مولانا فضل الرحمان کواحتساب کے جاری عمل پر تنقید کرنا تو یاد رہا لیکن کاش وہ عوام کویہ بھی بتا دیتے کہ جن کیلئے وہ مارچ کر رہے ہیں وہی ملک کو درپیش مسائل کی اصل وجہ ہیں۔ یہ دعویٰ کیا جارہا ہے کہ نام نہاد آزادی مارچ جہاں سے بھی گزرا وہاں استقبال کیلئے عوام کا ٹھاٹھیں مارتاہواسمندر تھا جبکہ سچ یہ ہے کہ مولانا فضل الرحمان کو اس طرف دھکیلنے والی(ن) او رپیپلز پارٹی کے کارکنان بھی باہر نہیں نکلے۔ لاہورمیں مسلم لیگ (ن) کا کوئی بڑارہنما شریک نہیں ہوا جبکہ (ن) او رپیپلز پارٹی کی شرکت کو ظاہر کرنے کیلئے جے یو آئی (ف) کے باریش بزرگوں کو پیپلز پارٹی اور (ن) لیگ کے جھنڈے تھمادئیے گئے۔ انہوں نے کہا کہ اب کرپشن کے بل بوتے پرانتخابات لڑنا اورکامیابی حاصل کرنا ممکن نہیں رہا اس لئے کرپشن کے کاروبار میں بھاری سرمایہ کاری کرنے والوں کو آنے والے انتخابات کی فکرلا حق ہو گئی ہے۔

ہمایوں اختر

مزید : میٹروپولیٹن 1