اوقاف اراضی پر مافیا قابض، کمرشل پلازے تعمیرکرنیکا انکشاف

  اوقاف اراضی پر مافیا قابض، کمرشل پلازے تعمیرکرنیکا انکشاف

  

راجن پور(نامہ نگار) سیکریٹری اوقاف لاہور کے حکم کو کوٹ مٹھن میں کوئی بھی پذیرائی نہ ملی۔درجنوں دوکانیں اور مکانات غیر متعلقہ افرادکے قبضے میں (بقیہ نمبر7صفحہ6پر)

ہونے کے باوجود کسی قسم کی کاروائی نہ کی گئی اوقاف کی دوکانیں اور مکانات کی خرید و فروخت کا سلسلہ جاری ہے ایک مافیا ہر وقت سر گرم رہتاہے دربار فرید کے نزدیک لوگوں نے تیس تیس ہزار روپے پر اوقاف کی دوکانیں کرایہ پر دے رکھیں ہیں جبکہ محکمہ اوقاف کو صرف 15 سو روپے کرایہ کی مد میں ملتے ہیں اسی طرح چھ چھ عشروں سے اوقاف کے مکانات لوگوں کے قبضے میں چلے آرہے ہیں اور وہ چند سو روپے کرایہ کی مد میں اوقاف کے ملتے ہیں ایسے ہی ہزاروں ایکڑ رقبہ چار اضلاع رحیم یارخان،راجن پور،بہاولپور اور ڈیرہ غازی خان میں لوگوں کے قبضے میں ہے اور اس کی خرید فروخت کی جاتی ہے متروکہ املاک کی اراضی مہنگے داموں غیر قانونی فروخت کی گئی ہے جن پر کمرشل پلازے تعمیر کر لیے گئے ہیں اور دوکانیں فروخت کی جا رہی ہیں۔ایک دوکان تیس لاکھ تک فروخت کی گئی محکمہ اوقاف کے افسران بہتی گنگا میں ہاتھ دھو کر اپنا حصہ وصول کر کے خاموش ہیں گذشتہ دنوں سیکریٹری اوقاف نے اوقاف کی پراپرٹی کی خرید و فروخت روکنے کیلئے سخت آرڈر جاری کیے تھے اور تین دن کیاندر ایسی دوکانوں اور مکانات کا قبضہ واگزار کرانا تھا اور اس پر عمدرآمد نہ کرنے والے افسران کے خلاف دو دن میں کاروائی کرنے کا حکم بھی صادر کیا گیا تھا کل تمام ڈیڈ لائینز ختم ہوچکی ہیں اور ناجائز قابضین کے خلاف کسی قسم کی کاروائی عمل میں نہ لائی گئی کسان اتحاد کے ضلعی صدر راؤ شوکت علی،راو اکبر،سماجی کارکنوں شیر علی،اللہ بخش،قاسم علی،نور محمد و دیگر نے سیکریٹری اوقاف سے حکم عدولی کے مرتکب افسران سے فوری کاروائی کا مطالبہ کرتے ہوئے ناجائز قابضین سے اوقاف کی پراپرٹی خالی کرانے کامطالبہ کیا ہے۔

اوفاف اراضی

مزید :

ملتان صفحہ آخر -