سرائیکی صوبہ پاکستان کی ضرورت ، اسکے بغیر بحران ختم نہیں ہوسکتا، ظہور دھریجہ

سرائیکی صوبہ پاکستان کی ضرورت ، اسکے بغیر بحران ختم نہیں ہوسکتا، ظہور دھریجہ

خان پور (نمائندہ خصوصی)حضرت امام حسینؓ نے حق کیلئے باطل قوتوں سے ٹکراجانے کا درس دیا ہے ،غمِ حسین کو طاقت میں تبدیل کرکے وسیب کے حقوق اور صوبہ سرائیکستان حاصل کریں گے ۔ان خیالات کا اظہار سرائیکستان عوامی اتحاد کے رہنماؤں ظہور دھریجہ ،راشد عزیز بھٹہ ،جام ایم ڈی گانگا ،میر نذیر کٹپال ،بابر دھریجہ ،مقصود دھریجہ ودیگر نے سرائیکستان لانگ مارچ کے سلسلے میں منعقد کیے گئے خصوصی(بقیہ نمبر28صفحہ12پر )

اجلاس کے دوران کیا۔انہوں نے کہا کہ سرائیکی صوبہ پاکستان کی ضرورت ہے اور صوبے کے بغیر ملک کا بحران ختم نہیں ہوسکتا۔انہوں نے کہا کہ پنجاب کے جبر کے خلاف صرف سرائیکی وسیب نہیں چھوٹے صوبے بھی فریاد کناں ہیں۔ سرائیکی رہنماؤں نے کہا کہ سرائیکی وسیب کے لوگ صرف اپنا نہیں دوسری محکموم قوموں کا بھی مقدمہ لڑرہے ہیں اس لئے 15اکتوبر کو سندھ سرائیکستان بارڈر سے شروع ہونیوالے سرائیکستان لانگ مارچ میں تمام جماعتوں اور خطے میں بسنے والے تمام افراد کو شرکت کی دعوت دیتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ سرائیکی جماعتیں صرف اپنے صوبے کیلئے نہیں بلکہ تمام محکوم طبقات کی جنگ لڑرہی ہیں،پنجاب کے حجم کو کم کرنا سرائیکی وسیب کے ساتھ سندھ،پنجاب ،خیبرپختونخواہ کے کے ساتھ ساتھ اسلام آباد کی ضرورت بھی ہے۔سرائیکی رہنماؤں نے کہا کہ سرائیکی صوبہ (ن) لیگ کے علاوہ تمام سیاسی جماعتوں کی ضرورت بھی ہے اور تمام جماعتیں چاہتے ہیں کہ صوبہ بنے ،صوبے میں صرف (ن) لیگ رکاوٹ ہے کہ وہ دراصل پنجابی لیگ ہے اور پاکستان کو پنجابستان کے طور پر دیکھتی ہے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر