خونی گیم بلیو وہیل کے لیے ایف آئی کے سائبر کرائم سیل نے ملک میں موجودہ گیم کے ایڈمن کی تلاش کے لیے ٹیم بنادی

خونی گیم بلیو وہیل کے لیے ایف آئی کے سائبر کرائم سیل نے ملک میں موجودہ گیم کے ...
خونی گیم بلیو وہیل کے لیے ایف آئی کے سائبر کرائم سیل نے ملک میں موجودہ گیم کے ایڈمن کی تلاش کے لیے ٹیم بنادی

  


پشاور (آن لائن ) خونی گیم بلیو وہیل سے پشاور سمیت ملک کے مختلف شہروں میں نوجوان لڑکوں، لڑکیوں کے متاثر ہونے اور خودکشی کرنے کی وجہ سے ایف آئی اے کے سائبر کرائم سیل نے ملک میں موجود ہ گیم کے ایڈمن کی تلاش کے لیے ٹیم بنا دی ہے۔

ذرائع نے بتایا ہے کہ انٹرنیٹ کیفوں میں اس گیم کے استعمال پر پابندی عائد کی جار ہی ہیں اور صوبائی حکومت اور ایف آئی اے کی جانب سے مشترکہ طور پر ٹیمیں نیٹ کیفوں پر چھاپے مارے گی بلیو وہیل گیم کا لڑکیاں زیادہ شکار ہو رہی ہیں پشاور اور مردان کی دو لڑکیوں کو خود کشی کی کوشش کرتے ہوئے بچا لیا گیا خیبر پختونخوا کے بچے بھی اس گیم کے نفسیاتی مریض بننے لگے ہیں اور اب تک چودہ بچوں کو سرکاری اور غیر سرکاری ہسپتالوں میں ماہر نفسیات کے پاس لایا گیا ہے ۔

ذرائع کے مطابق ایف آئی اے کے سائبر کرائم سیل اس بارے میں بھی تحقیقات کر رہے ہیں کہ آئی ٹی کے ماہر نوجوان کے کس گروپ نے پاکستانی کم عمر لڑکیوں کو تنگ کر نے کیلئے اس گیم کو آلہ کار کے طور پر استعمال کرنا شروع تو نہیں کر دیا ہے۔

مزید : پشاور