17 سال کی عمر میں جوان ہونے والا شخص عمر کے کس حصے تک ’بھرپور جوان‘ رہتا ہے؟ عالمی ادارہ صحت نے حیران کن اعداد وشمار جاری کردیے

17 سال کی عمر میں جوان ہونے والا شخص عمر کے کس حصے تک ’بھرپور جوان‘ رہتا ہے؟ ...
17 سال کی عمر میں جوان ہونے والا شخص عمر کے کس حصے تک ’بھرپور جوان‘ رہتا ہے؟ عالمی ادارہ صحت نے حیران کن اعداد وشمار جاری کردیے

  


نیو یارک (ڈیلی پاکستان آن لائن) ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (ڈبلیو ایچ او) نے نوجوان کی تعریف تبدیل کردی ہے، اب جس شخص کی عمر 65 سال تک ہوگی وہ نوجوان کہلائے گا۔

ایک رپورٹ کے مطابق برطانیہ میں فرینڈلی سوسائٹیز ایکٹ 1875 کے تحت پہلے جس شخص کی عمر 50 سال ہوتی تھی اسے جوان سمجھا جاتا تھا لیکن ڈبلیو ایچ او نے اسے تسلیم نہیں کیا اور 60 سالہ شخص کو نوجوان کا درجہ دیا۔ حال ہی میں ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن نے ایک نئی ریسرچ کی ہے جس میں دنیا بھر کے لوگوں کی صحت اور عمر کی حد کا جائزہ لیا گیا جس کے بعد جوان کی ایک نئی تعریف کی گئی ہے جس کے مطابق ہر 65سالہ شخص کو نوجوان سمجھا جائے گا۔

اگر آپ کے کسی دوست کو بجلی کا جھٹکا لگے اور وہ سوئچ بورڈ یا بجلی کے تار سے چپک جائے تو بچانے کیلئے فوری کیا کام کرنا چاہیے؟ جانئے وہ طریقہ جس کے ذریعے آپ کسی دن کسی کی جان بچاسکتے ہیں

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کی نئی تحقیق کے مطابق ایک دن سے لے کر 17 سال کی عمر کے ہر فرد کو ’ کم عمر‘ سمجھا جائے گا جبکہ 18 سے 65 سال کی عمر کے لوگ ’ نوجوان یا جوان‘ کہلائیں گے۔ اسی طرح 66 سے 79 سال کی عمر تک کے لوگ ادھیڑ عمر ہوں گے اور 80 سے 99 سال والے ’ بزرگ یا سینئر شہری‘ ہوں گے ۔ اگر کوئی شخص 100 سال سے بھی طویل عمر پائے تو اسے ’ تادیر جینے والا بزرگ‘ کہا جائے گا۔

مزید : تعلیم و صحت


loading...