کیپٹن (ر) صفدر، رانا ثنا اللہ سمیت دیگر کی ضمانتوں میں 16اکتوبر تک توسیع

    کیپٹن (ر) صفدر، رانا ثنا اللہ سمیت دیگر کی ضمانتوں میں 16اکتوبر تک توسیع

  

 لاہور(نامہ نگار)انسداد دہشت گردی کی عدالت کے جج ارشد حسین بھٹہ نے نیب آفس میں مریم نواز کی پیشی کے موقع ہنگامہ آرائی میں ملوث مسلم لیگ (ن) کے رہنمااور مریم نواز کے شوہر کیپٹن (ر) محمد صفدراوررانا ثناء اللہ سمیت دیگر ملزموں کی ضمانت کی درخواستوں میں 6اکتوبر تک توسیع کردی ہے،گزشتہ روزانسداد دہشت گردی کی عدالت میں کیپٹن (ر)محمدصفدر،رانا ثناء اللہ اور دیگر لیگی رہنماء کی عبوری درخواست ضمانتوں کی سماعت ہوئی،عدالت میں رانا ثناء اللہ اور کیپٹن صفدر حاضری کے لیے پیش ہوئے،تھانہ چوہنگ کے تفتیشی افسر کی جانب سے عدالت میں رپورٹ پیش کی گئی،جس میں کہا گیاہے کہ کیپٹن (ر)محمدصفدر پر ہنگامہ آرائی اور اشتعال انگیزی کرانے کا الزام عائد ہے، ملزم مریم نواز کی نیب آفس میں پیشی کے موقع پر پولیس پر پتھراؤ کرانے اور کارکنان کی ہنگامہ آرائی میں ملوث ہے، ملزم کے وکیل سید فرہاد علی شاہ نے عدالت میں موقف اختیار کیا کہ چوہنگ پولیس نے نیب آفس پر حملے اور ہنگامہ آرائی کے الزام میں بے بنیاد مقدمہ درج کیا ہے، ان کا موکل اپنی بیوی مریم صفدر کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لیے گیا تھا،پولیس نے بے بنیاد انسداددہشت گردی کا مقدمہ درج کر دیاہے،درخواست ضمانتیں منظور کی جائیں،عدالتی سماعت کے بعد کیپٹن (ر) محمد صفدر نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ چیئرمین نیب اب انتقامی کارروائی کرنا چاہتے ہیں،میں گھر کا بھیدی ہوں لنگا ڈھا دوں گا،میں ڈرنے والی ہڈی نہیں ہوں، پانامہ دیکھا، اڈیالہ اور کوٹ لکھپت بھی کاٹی ہے،اگر آئین ملک اور ریاست کی سلامتی چاہتے ہیں تو جیل جانا ہوگا،بزدل حکمران ایک خاتون سے ڈرتے ہیں،اب وقت آگیا ہے مریم کو باہر نکلنا ہوگا، نیب اب انتقامی کرنا چاہتا ہے،مجھے نیب لاہور میں نہیں پشاورمیں بلانا چاہتے ہیں،میں نے عاصم باجوہ سے رسیدیں مانگیں تھی نیب نوٹس نہیں مانگا،میں سیاست سے ہٹ کر احتساب چاہتا ہوں جیسے پرویز مشرف کو کٹہرے میں  لائے ایسے عاصم باجوہ کو بھی لائیں گے،میں جے آئی ٹی کے لیے اسلام آباد جاؤں گا،مجھ سے پوچھتے ہیں آثاثے کیسے آئے عاصم باجوہ سے نہیں پوچھتے،جمہوریت کی بحالی کے لیے تحریک چل چکی ہے۔

ہنگامہ آرائی کیس

مزید :

صفحہ آخر -