بیٹھے ہیں چین سے کہیں جانا تو ہے نہیں  | رحمان فارس |

بیٹھے ہیں چین سے کہیں جانا تو ہے نہیں  | رحمان فارس |
بیٹھے ہیں چین سے کہیں جانا تو ہے نہیں  | رحمان فارس |

  

بیٹھے ہیں چین سے کہیں جانا تو ہے نہیں 

ہم بے گھروں کا کوئی ٹھکانا تو ہے نہیں 

تم بھی ہو بیتے وقت کے مانند ہو بہو 

تم نے بھی یاد آنا ہے , آنا تو ہے نہیں 

عہدِ وفا سے کس لیے خائف ہو میری جان 

کر لو کہ تم نے عہد نبھانا تو ہے نہیں 

وہ جو ہمیں عزیز ہے کیسا ہے، کون ہے 

کیوں پوچھتے ہو ہم نے بتانا تو ہے نہیں 

دنیا ہم اہلِ عشق پہ کیوں پھینکتی ہے جال 

ہم نے ترے فریب میں آنا تو ہے نہیں 

وہ عشق تو کرے گا مگر دیکھ بھال کے 

فارسؔ وہ تیرے جیسا دوانہ تو ہے نہیں 

شاعر: رحمان فارس

(شعری مجموعہ:عشق بخیر؛سالِ اشاعت،2018)

Bethay    Hen   Chain   Say    Kahen    Jaana   To   Hay   Nahen

Ham    Be    Gharon   Ka   Koi   Thikaana   To   Hay   Nahen

Tum   Bhi    Ho   Beetay    Huay   Waqt    K   Maanind    Hu    Ba    Hu

Tum    Nay   Bhi     Yaad     Aana    Hay   ,    Aana    To     Hay   Nahen

 Ehd-e-Wafa    Say    Kiss     Liay    Khaaif     Ho   Meri    Jaan

Kar     Lo    Keh    Tum    Nay   Ehd     Nibhaana    To    Hay    Nahen

 

Wo    Jo    Hamnen     Aziz    Hay    Kaisa    Hay    ,  Kon    Hay

Kiun    Poochhtay     Ho    Hum     Nay   Bataana  To   Hay   Nahen

 Dunya       Ham     Ehl-e-Eshq    Pe     Kiun    Phainkti     Hay    Jaal

Ham    Nay    Tiray    Faraib    Men    Aana   To    Hay   Nahen

Wo     Eshq    To     Karay     Ga    Magar    Dekh   Bhaal   K

FARIS   Wo   Teray    Jaisa    Diwaana  To   Hay   Nahen

 

Poet: Rehman    Faris 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -