شام سے پہلے گھر گئے ہوتے  |رسا چغتائی|

شام سے پہلے گھر گئے ہوتے  |رسا چغتائی|
شام سے پہلے گھر گئے ہوتے  |رسا چغتائی|

  

شام سے پہلے گھر گئے ہوتے 

یا سرِ شام مر گئے ہوتے 

اس گدایانہ زندگی سے تو 

وضع دارانہ مر گئے ہوتے 

یوں بھی اک عمر رائیگاں گزری 

یوں بھی کچھ دن گزر گئے ہوتے 

تو جو دل سے اتر گیا ہوتا 

زخم دل کے ابھر گئے ہوتے 

ہم نہ ہوتے تو حادثاتِ جہاں 

جانے کس کس کے سر گئے ہوتے 

کوئی دامن کشِ خیال نہ تھا 

ورنہ ہم بھی ٹھہر گئے ہوتے 

شمعِ محفل نہ تھے کہ محفل میں 

لے کے ہم زخم سر گئے ہوتے 

شاعر: رسا چغتائی

(شعری مجموعہ:ریختہ؛سالِ اشاعت،1986)

Shaam   Say   Pehlaty   Ghar   Gaey   Hotay 

Ya   Sar-e-Shaam   Mar   Mar   Gaey   Hotay 

Iss   Gadayaana   Zindagi    Say  To 

Wazadaraana   Mar    Gaey   Hotay 

Yun   Bhi   Ik   Umr   Raaigaan   Guzri

Yun   Bhi   Kuch   Din   Guzar   Gaey   Hotay 

Tu   Jo   Dil   Say   Utar   Gaya   Hota

Zakhm   Dil   K   Ubhar   Gaey   Hotay

Ham    Na   Hotay   To   Haasdsaat -e-Jahan

Jaany   Kiss   Kiss   K   Sar    Gaey    Hotay 

Koi   Daaman   Kash-e-Khayal   Na   Tha

Warnas   Ham   Bhi   Thahar    Gaey   Hotay 

Shama-e-Mehfil   Na    Thay   Keh   Mehfil   Men

Lay   K   Ham   Zakhm-e-Sar    Gaey   Hotay 

Poet: Rasa   Chughtai  

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -