سمجھ سکے گا کوئی کس طرح الم میرا| ریاض مجید |

سمجھ سکے گا کوئی کس طرح الم میرا| ریاض مجید |
سمجھ سکے گا کوئی کس طرح الم میرا| ریاض مجید |

  

سمجھ سکے گا کوئی کس طرح الم میرا

بنا ہے رقص گہہِ کافراں، حرم میرا

ہوا کی طرح رو میں ہے میرے درد کی لہر

سمندروں کی طرح بے کراں ہے غم میرا

زبان گنگ ہے اس عالمِ اذیت میں

میں کیا لکھوں کہ بے الفاظ ہے قلم میرا

کٹے تھے ہاتھ توآنکھیں بھی مند گئیں ہوتیں

پڑا ہے غیر کے پاؤں تلے علم میرا

رہینِ رنج ہوں میں کچھ بھی نہ کرسکنے کا

مری شکست ہر اُٹھتا ہوا قدم میرا

قبول کیسے کیا جو سرشت ہی میں نہ تھا

کٹے بغیر ہی سر کیوں ہوا ہے خم میرا

میں بعدِ جنگ کی پرہول خامشی تھا ریاض

جلی زمیں پہ ہوا سانحہ رقم میرا

شاعر: ریاض مجید

(شعری مجموعہ: ڈوبتے بدن کا ہاتھ)

Samajh    Sakay    Ga    Koi   Kiss   Tarah   Alam   Mera

Bana    Hay   Raqs    Gah-e-Kaafraan    Haram   Mera

Hawaaon    Ki   Tarah    Rao   Men    Hay    Meray   Dard   Ki   Lehr

Samandron   Ki   Tarah   Be   Karaan   Hay   Gham   Mera

Zubaan   Gunag   Hay   Iss    Aalam-e-Aziyyat   Men 

Main   Kaya   Likhun   Keh    Be Alfaaz    Hay    Qalam   Mera

Katay    Thay    Haath   To    Aankhen     Bhi    Munnd    Gai   Hoten

Parra   Hay   Ghair   K   Paaon   Talay   Alam   Mera

Raheen-e-Ranj   Hun   Main    Kuchh    Bhi    Na    Kar    Saknay   Ka

Miri    Shakist    Har    Uthta   Hua   Qadam   Mera

Qabool   Kaisay    Kiya    Jo    Sarisht   Hi    Men   Na   Tha 

Kattay    Baghair    Hi    Sar    Kiun   Hua    Hay    Kham   Mera

Main    Baad-e- Jang    Ki    Pur   Haol   Khaamshi   Tha   RIAZ

Jali    Zameen   Pe   Hua   Saanihaa   Raqam   Mera

Poet: Riaz    Majeed

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -