نہتے بھائی گھنے جنگلوں میں چھوڑ آئے| ریاض مجید |

نہتے بھائی گھنے جنگلوں میں چھوڑ آئے| ریاض مجید |
نہتے بھائی گھنے جنگلوں میں چھوڑ آئے| ریاض مجید |

  

نہتے بھائی گھنے جنگلوں میں چھوڑ آئے

ہم اپنے یوسفوں کو بھیڑیوں میں چھوڑ آئے

زمیں بچانا تھی ہم کو تو جان دے کر بھی

بچا کے خود کو اُسے دشمنوں میں چھوڑ آئے

وہ بے نیاز تھے ،ماں تیرے سر پھرے بچے

اُبلتا دودھ تری چھاتیوں میں چھوڑ آئے

خدا کا قہر تھے برسے بھی ہم تو لو کی طرح

ہم اپنی ساری نمی بادلوںمیں چھوڑ آئے

وہاں سے لوٹ کر اپنی شباہتیں نہ ملیں

ہم اپنی شکل ہی اُن آئنوں میں چھوڑ آئے

خبر نہ تھی کہ اندھیرے ہیں راہِ ہجرت میں

چراغ جلتے ہوئے کھڑکیوں میں چھوڑ آئے

وہ ساتھ لے کے پہنچنا تھا جس کو منزل تک

اُسے سدا کے لیے راستوں میں چھوڑ آئے

چلے تھے ہم جہاں میں ریاض بکنے کو

ہم اپنی آب مگر سیپیوں میں چھوڑ آئے

شاعر: ریاض مجید

(شعری مجموعہ: ڈوبتے بدن کا ہاتھ)

Nihattay   Bhai   Ghanay   Janglon   Men   Chorr   Aaey

Ham   Apnay   Yousfon   Ko   Bherrion    Men   Chorr   Aaey

Zameen    Bachaana   Thi   Ham   Ko   To   Jaan   Day   Kar   Bhi

Bachaa   K   Khud   Ko   Usay   Dushmanon   Men   Chorr   Aaey

Wo   Be Nayaaz   Thay    ,   Maan   Teray   Sar   Phiray   Bachay

Ubalta   Doodh   Tiri   Chhaatiyon    Men   Chorr   Aaey

Khuda   K   Qehr   Thay   Barsay   Bhi   To   Loo   Ki   Tarah

Ham   Apni   Saari   Nami   Baadlon   Men   Chorr   Aaey

Wahaan   Say    Laot   Kar   Apni   Shabaahten   Na   Milen

Ham   Apni   Shakl    Hi   Un    Aaainon   Men   Chorr   Aaey

Khabar   Na   Thi   Keh   Andhairay   Hen    Raah-e-Hijrat   Men

Charaagh    Jaltay   Huay   Khirrkiun   Men   Chorr   Aaey

Wo   Saath   Lay   K   Pahunchna   Tha   Jiss    Ko    Manzill   Tak

Usay   Sadaa   K   Liay    Raaston   Men   Chorr   Aaey

Chalay   Thay    Ham   Bhi   RIAZ   Biknay   Ko

Ham   Apni    Aab   Magar   Seepion   Men   Chorr   Aaey

Poet: Riaz    Majeed

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -