کون کہاں تک جا سکتا ہے | ریحانہ روحی |

کون کہاں تک جا سکتا ہے | ریحانہ روحی |
کون کہاں تک جا سکتا ہے | ریحانہ روحی |

  

کون کہاں تک جا سکتا ہے 

یہ تو وقت بتا سکتا ہے 

عشق میں وحشت کا اک شعلہ 

گھر کو آگ لگا سکتا ہے 

جذبوں کی شدت کا سورج 

زنجیریں پگھلا سکتا ہے 

تیری آمد کا اک جھونکا 

اجڑا شہر بسا سکتا ہے 

آئینے میں جرأت ہو تو 

عکس بھی صورت پا سکتا ہے 

آنکھوں میں ٹھہرا اک منظر 

راہ میں گرد اڑا سکتا ہے 

تجھ کو پیہم سوچنے والا 

خواب کو ہاتھ لگا سکتا ہے 

شاعرہ: ریحانہ روحی

Kon   Kahan   Tak    Ja   Sakta   Hay

Ye   To   Waqt   Bataa  Sakta   Hay

 Eshq   Men   Wehshat   Ka   Ik    Shola

Ghar   Ko   Aag   Lagaa  Sakta   Hay

Jazbon   Ki   Shiddat    Ka   Sooraj

Zangeer   Pighlaa    Sakta   Hay

 Teri   Aamad   Ka   Ik   Jhonka

 Ujrra   Shehr   Basaa   Sakta   Hay

 

Aainay   Men   Jurrat   Ho To

Aks   Bhi   Soorat   Paa   Sakta   Hay

 Aankhon   Men   Thehra   Ik   Manzar

Raah   Men   Gard   Urra   Sakta   Hay

 Tujh   Ko  Paiham   Sochnay   Waalay

Khaab   Ko   Haath   Lagaa   Sakta   Hay

 Poetess: Rehan    Roohi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -