نیند آنکھوں میں مسلسل نہیں ہونے دیتا | ریحانہ روحی |

نیند آنکھوں میں مسلسل نہیں ہونے دیتا | ریحانہ روحی |
نیند آنکھوں میں مسلسل نہیں ہونے دیتا | ریحانہ روحی |

  

نیند آنکھوں میں مسلسل نہیں ہونے دیتا 

وہ مرا خواب مکمل نہیں ہونے دیتا 

آنکھ کے شیش محل سے وہ کسی بھی لمحے 

اپنی تصویر کو اوجھل نہیں ہونے دیتا 

رابطہ بھی نہیں رکھتا ہے سر وصل کوئی 

اور تعلق بھی معطل نہیں ہونے دیتا 

وہ جو اک شہر ہے پانی کے کنارے آباد 

اپنے اطراف میں دلدل نہیں ہونے دیتا 

جب کہ تقدیر اٹل ہے تو دعا کیا معنی 

ذہن اس فلسفے کو حل نہیں ہونے دیتا 

دل تو کہتا ہے اسے لوٹ کے آنا ہے یہیں 

یہ دلاسا مجھے پاگل نہیں ہونے دیتا 

قریۂ جاں پہ کبھی ٹوٹ کے برسیں روحیؔ 

ظرف اشکوں کو وہ بادل نہیں ہونے دیتا 

شاعر: ریحانہ روحی

Neend    Aanhkon   Men   Musalsal   Nahen    Honay   Deta

Wo   Mira    Khaab   Mukammal   Nahen    Honay   Deta

Aankh   K   Sheesh   Mahal   Say   Wo   Kisi   Bhi   Lamhay

Apni   Tasveer    Ko   Ojhall   Nahen    Honay   Deta

 Raabtah   Bhi    Nahen   Rakhta   Hay Sar-e-Wasl  Koi

Aor   Talluq   Bhi   Muattal   Nahen    Honay   Deta

 Wo   Jo  Ik   Shehr   Hay   Paani   K   Kinaaray   Aabaad

Apnay   Atraaf   Men   Daldal  Nahen    Honay   Deta

 Jab   Keh  Taqdeer   Attal    Hay   To   Dua   Kaya   Maani

 Zehn   Iss   Falsafay    Ko   Hall   Nahen    Honay   Deta

 

Dil   To   Kehta   Hay   Usay   Laot   K    Aana    Hay  Yahen

Yeh   Dilaasa   Mujhay    Paagal   Nahen    Honay   Deta

Qarya-e- Jaan   Pe   Kabhi    Toot    K   Barsen   ROOHI

Zarf    Ashkon   Ko  Wo    Baadal   Nahen    Honay   Deta

Poetess: Rehana    Roohi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -