جنونِ عشق میں صدچاک ہونا پڑتا ہے  | ریحانہ روحی |

جنونِ عشق میں صدچاک ہونا پڑتا ہے  | ریحانہ روحی |
جنونِ عشق میں صدچاک ہونا پڑتا ہے  | ریحانہ روحی |

  

جنونِ عشق میں صدچاک ہونا پڑتا ہے 

اس انتہا کے لیے خاک ہونا پڑتا ہے 

کسی سے جب کبھی ہم زندگی بدلتے ہیں 

تو پھر بدن کی بھی پوشاک ہونا پڑتا ہے 

زمیں پہ خاک نشینی کا وصف رکھتے ہوئے 

کبھی کبھی ہمیں افلاک ہونا پڑتا ہے 

اگر میں ڈوبی اسے ساتھ لے کے ڈوبوں گی 

محبتوں میں بھی سفاک ہونا پڑتا ہے 

ہوا کے ساتھ محبت کے دھوپ صحرا میں 

گلوں کو بھی خس و خاشاک ہونا پڑتا ہے 

بساط وقت کی چالیں سمجھ سکیں روحیؔ 

کم از کم اتنا تو چالاک ہونا پڑتا ہے 

شاعرہ : ریحانہ روحی

Junoon-e-Eshq   Men   Sad   Chaak   Hona   Parrta   Hay

Iss   Intahaa    K   Liay    Khaak    Hona   Parrta   Hay

 Kisi   Say   Jab   kabhi    Ham   Zindagi   Badaltay   Hen

To   Phir   Badan   Ki   Bhi   Poshaak   Hona   Parrta   Hay

 Zameen   Pe   Khaak   Nasheeni   Ka    Wasf    Rakhtay   Huay

Kabhi    Kabhi   Hamen     Aflaak   Hona   Parrta   Hay

 Agar    Main    Doobi   Usay    Sath   Lay   K     Dooboon   Gi

Muahbbaton    Men    Bhi    Saffaak   Hona   Parrta   Hay

 Hawaa    K    Saath     Muhabbat    K   Dhoop    Sehra   Men

Gulon    Ko    Bhi    Khas-o- Khashaak    Hona   Parrta   Hay

Basaat -e-Waqt   Ki   Chaalen     Samajh    ROOHi

 Kam    Az    Kam   Itna   To   Chalaak    Hona    Parrta   Hay

 

Poetess: Rehana   Roohi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -