وہ ایک شخص جو آنسو بہانے والا ہے| ریحانہ قمر |

وہ ایک شخص جو آنسو بہانے والا ہے| ریحانہ قمر |
وہ ایک شخص جو آنسو بہانے والا ہے| ریحانہ قمر |

  

وہ ایک شخص جو آنسو بہانے والا ہے 

تمام شہر کی خوشیاں چرانے والا ہے 

ابھی میں دیکھ کے آئی ہوں اس کی آنکھ کو 

تمہارے شہر میں سیلاب آنے والا ہے 

تمہاری آنکھوں پہ جاؤں کہ ہنستے ہونٹوں پر 

تمہارا ڈھنگ سمجھ میں نہ آنے والا ہے 

کہاں ہیں دودھ کی نہریں نکالنے والے 

یہاں تو جو بھی ہے باتیں بنانے والا ہے 

میں خوش بہت ہوں کہ سورج نکل رہا ہے قمرؔ 

مگر وہ وقت جو پھولوں پہ آنے والا ہے 

شاعرہ: ریحانہ قمر

Wo    Aik   Shakhs   Jo    Aansu   Bahaanay  Waala   Hay

Tamaam   Shehr    Ki   Khushiyaan    Churaanay   Waala   Hay

 Abhi    Main   Dekh    Aai   Hun    Uss    Ki    Aankh   Ko

Tumhaaray    Shehr    Men   Selaab    Aanay   Waala   Hay

 Tumhaari    Aankhon    Pe     Jaun    Keh    Hanstay    Honton   Par

Tumhaara    Dhang    Samajh   Na    Aanay    Waala   Hay

Kahan   Hen   Doodh    Ki    Nehren    Nikaalnay   Waalay

Yahan   To    Jo   Bhi    Hay    Baaten    Banaanay   Waala   Hay

 Main    Khush    Bahut    Hun    Keh    Sooraj    Nikal    Raha   Hay   QAMAR

Magar   Wo    Waqt    Jo    Phoolon    Pe    Aanay Waala   Hay

 

Poet: Rehana    Qamar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -