محبت سے مکر جانا ضروری ہو گیا تھا | ریحانہ قمر |

محبت سے مکر جانا ضروری ہو گیا تھا | ریحانہ قمر |
محبت سے مکر جانا ضروری ہو گیا تھا | ریحانہ قمر |

  

محبت سے مکر جانا ضروری ہو گیا تھا 

پلٹ کے اپنے گھر جانا ضروری ہو گیا تھا 

نظر انداز کرنے کی سزا دینی تھی تجھ کو 

ترے دل میں اتر جانا ضروری ہو گیا تھا 

میں سناٹے کے جنگل سے بہت تنگ آ گئی تھی 

کسی آواز پر جانا ضروری ہو گیا تھا 

میں سسی کی طرح سوتی رہی اور چل دیے تم 

بتا دیتے اگر جانا ضروری ہو گیا تھا 

تعاقب خود نہ کرتی تو مرے آنسو نکلتے 

میں کیا کرتی قمرؔ جانا ضروری ہو گیا تھا 

شاعرہ: ریحانہ قمر

Muhabbat    Say    Mukar   Jaana    Zaroori    Ho   Gaya   Tha

Palatt   K    Apnay    Ghar   Jaana   Zaroori    Ho   Gaya   Tha

 Nazar    Andaaz    Karnay   Ki    Sazaa   Deni   Thi   Tujh   Ko

Tiray   Dil   Men   Utar  Jaana   Zaroori    Ho   Gaya   Tha

 Main   Sannaatay   K   Jangal    Say   Bahut   Tang   Aa   Gai   Thi

Kisi    Awaaz   Par   Jaana    Zaroori    Ho   Gaya   Tha

 Main   Sassi   Ki   Tarah    Soti   Rahi    Aor    Chall  Diay Tum

Bataa    Detay   Agar    Jaana   Zaroori    Ho   Gaya   Tha

 

Taaqob   Khud    Na    Karti   To   Miray   Aansu   Nikaltay 

Main   Kay  Karti   QAMAR   Jaana   Zaroori    Ho   Gaya   Tha

Poet: Rehana   Qamar

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -