اپنی تلاش میں نکلنے کا انجام|زاہد امروز |

اپنی تلاش میں نکلنے کا انجام|زاہد امروز |
اپنی تلاش میں نکلنے کا انجام|زاہد امروز |

  

اپنی تلاش میں نکلنے کا انجام

میں نے گٹھڑی میں وقت باندھا

اور اپنی تلاش میں نکل گیا

سمندر نے میرا سارا جسم چوم لیا

اور صحراؤں نے میرے جسم سے ریت چرا لی

چیونٹیوں نے بڑے اتفاق سے

میری حسین برابر تقسیم کر لیں

دیواروں نے میرا سایہ کاٹ کر

مجھے دھوپ کے ڈھیر میں پھینک دیا

چوہوں نے میری سوچوں میں  بل بنا لیے

میں نجات کی خاطر

بلیوں تعاقب کرنے لگا

جنگل نے مجھے دہشت پہنا دی

میں تمام رات بھیڑیوں سے ڈرتا رہا

صبح ایک انسان نے مجھے کاٹ لیا

شاعر: زاہد امروز

(شعری مجموعہ:خود کشی کے موسم میں؛سالِ اشاعت،2009)

Main    Nay   Gatharri   Men   Waqt   Baandha

Aor   Apni   Talaash   Men   Nikal   Gaya

 Samandar   Nay   Mera   Saara   Jism   Choom   Liya

 Aor   Sehraaon   Nay   Meray   Jism   Ki   Rait   Churaa   Li

 Chioontion   Nay   Barray   Ittefaaq   Say

Miri   Hisen   Baraabar   Taqseem   Kar   Len

 Dewaaron   Nay   Mera   Saaya   Kaat   Kar

Mujhay   Dhoop   K   Dhair   Men   Daal   Diya

 Choohon   Nay   Meri   Sochon   Men    Bill   Bana   Liay

 Main   Nijaat   Ki   Khaatir

 Bilion   Ka   Taaqub   Karnay   Laga

 Jangal   Nay   Mujhay    Dehshat   Pehna    Di

 Main   Tamaam   Raat    Bhairrion   Say   Darta   Raha

 Subh   Aik    Insaan   Nay   Mujhay   Kaat    Liya

 

Poet: Zahid   Imroz

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -