جاوید ہاشمی کی تحریک انصاف سے علیحدگی ،کپتان کی ایک اہم وکٹ گر گئی

جاوید ہاشمی کی تحریک انصاف سے علیحدگی ،کپتان کی ایک اہم وکٹ گر گئی

  


لاہور(جاویداقبال)تحریک انصاف کے صدر اور ملک کے ممتاز سیاست دان جاوید ہاشمی کی تحریک انصاف سے علیحدگی سے درحقیقت کپتان کی ایک اہم وکٹ گر گئی ہے جب کی دوسری طرف وائس چیرمین شاہ محمود قریشی کے دن بھر کپتان کے کنٹینر سے غائب رہنے نے کئی شک و شہبات پیدا کر دئے ہیں جبکہ تین ارکان قومی اسمبلی گلزار خان مسرت اور ناصر خٹک کو پارٹی سے نکالنے کے حوالے سے کپتان کے اعلان کے بعد پارٹی میں یہ تاثر ابھرا ہے کہ جلد تحریک انصاف میں فارورڈ بلاک کی شکل میں ایک بڑا گروپ کھل کر کپتان کے سامنے آنے کے امکانات پیدا ہو گئے ہیں ،تحریک انصاف کے ذرائع کا کہنا ہے کہ مخدوم جاوید ہاشمی تحریک انصاف کے پہلے منتخب صدر ہیں انھیں صدارت سے ہٹانے کے لیے پارٹی چیرمین کو پارٹی منشور میں دئیے گئے طریقہ کار پر عمل کرنا ہو گا اکیلے چیرمین پارٹی صدر کو ایگزیکٹو آڈر سے الگ نہیں کر سکتے اگر ایسا ہوا تو یہ پارٹی منشور کے خلاف ہو گا ۔ذرائع کا کہنا ہے کہ کپتان کی طرف سے پارٹی سے نکالے گئے ارکان قومی اسمبلی کے علاوہ کے پی کے سے تعلق رکھنے والے بعض ارکان صوبائی اسمبلی اور کئی دیگر رہنماؤں نے پارٹی صدر سے رابطے کئے اور ان سے اظہار یکجہتی کیا ۔سیالکوٹ سے تعلق رکھنے والے ایک اہم رہنما نے بھی جاوید ہاشمی سے رابطہ کیا اور کہا کہ وہ پارٹی صدر ہیں اور وہ ان کے ساتھ چلنے کو تیار ہیں ذرائع کا کہنا ہے کہ اگر جاوید ہاشمی عمران خان کے مقابلے میں سٹینڈ لیا تو تحریک انصاف کا ایک بڑا حصہ جاوید ہاشمی کے ساتھ چلا جائے گا اور پارٹی ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہو جائے گا ذرائع نے یہ بھی کہا ہے کہ ایک ایسے وقت میں جب عمران خان کا آزادی مارچ اور حکومت آمنے سامنے ہیں اور دھرنا فیصلہ کن مرحلے میں داخل ہو چکا ہے ایسے میں کپتان کی طرف سے جاوید ہاشمی سے راہیں جدا کرنے کے اعلا ن کی قیمت ادا کرنی پڑ سکتی ہے جس کا نتیجہ جلد سامنے آنے کا امکان ہے ۔

مزید :

صفحہ اول -