مری ،ریسکیو اہلکار رضوان علی کی سرکٹی نعش کام عمہ حل ،شبہ میں بیوی گرفتار

مری ،ریسکیو اہلکار رضوان علی کی سرکٹی نعش کام عمہ حل ،شبہ میں بیوی گرفتار

  

مری ( خبر نگار ) رضوان علی کی سر کٹی نعش کامعمہ حل، بیوی پر قتل کاشبہ کیا جارہا ہے، ’’نادرا‘‘ نے پنڈی پوائنٹ سے ملنے والی سر کٹی لاپتہ نعش کی شناخت ریسکیو 1122 مری کے اہلکار رضوان علی راجپوت کی حیثیت سے کر دی ہے ، مقتول کے سر کی تلاش جاری ہے۔ پولیس نے اس کی بیالیس سالہ بیوہ نازیہ کو حراست میں لے لیا ہے جو انتہائی چالاک و عیار عورت ہے جو اپنے آپ کو ذہنی مریض ثابت کیئے جانے کی کوشش میں مصروف ہے ۔،مقتول کے ورثاء کی جانب سے جمعرات کو ملزمہ نادیہ کو رضوان علی راجپوت کے قتل میں ملزم قرار دیے جانے کے سلسلے میں درخواست تیار کر لی گئی ہے ۔ نادیہ کے بارے میں8 معلوم ہوا ہے کہ اس نے مقتول رضوان علی راجپوت سے تیسری شادی کی تھی ہے۔ مبینہ ملزمہ جس کے بارے میں معلوم ہوا ہے کہ وہ معاشی طور پر مضبوط حیثیت کی حامل ہے پنڈی پوائنٹ میں رہائش پذیر ہے جہاں سے انتہائی مختصر فاصلے سے مقتول کی نعش بر آمد ہوئی ہے ۔ اس طرح وہاں سے ملنے والے تمام تر شواہد کے مطابق نادیہ کے شوہر کو قتل کیا گیا ہے ۔پولیس کے مطابق تحویل میں لی جانے والی نادیہ جس کی گاڑی کو دھوئے جانے کے باوجو د بھی اس میں خون کے واضع دھبے موجود ہیں اس قتل کو واضع کر رہے ہیں۔اس طرح دھار جاوہ کی ڈھوک نکرہ میں رضوان علی کے قتل پر اس کے گھر میں صف ماتم بچھی ہوئی ہے ۔ادھر ایس ڈی پی او رضاء اللہ کے مطابق وہ اس انتہائی بہمانہ اور سنگین قتل کے ملزمان کے وہ انتہائی نزدیک پہنچ چکے ہیں جبکہ اس میں ملوث تمام ملزمان کو با ضابطہ طور پرگرفتار کر لیا جائے گا ۔اس کے اہل خانہ سے اظہار ہمدردی کے لیئے بڑی تعداد میں لوگ ان کے گھر دھار جاوہ میں پہنچ رہے ہیں ۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -