وہ 9 سالہ بچی جس کا چہرہ ہی نہیں ہے

وہ 9 سالہ بچی جس کا چہرہ ہی نہیں ہے
وہ 9 سالہ بچی جس کا چہرہ ہی نہیں ہے

  

برازیلیا(نیوز ڈیسک) پیدائشی طور پر کسی بچے کا معذور ہونا یا کسی عضو سے محروم ہونا کوئی انہونی بات نہیں ہے لیکن برازیل میں ایک بچی نے ایسی خوفناک معذوری کے ساتھ جنم لیا کہ جس کی مثال شاید ہی پہلے کبھی دیکھنے میں آئی ہو۔دی مرر کی رپورٹ کے مطابق ساﺅ فرانچسکو شہر کے ایک ہسپتال میں جنم لینے والی یہ بچی چہرے سے محروم تھی۔ ڈاکٹروں نے بھی اس سے پہلے ایسا کیس اپنی زندگی میں کبھی نہیںدیکھا تھا۔ ان کے نزدیک اس بچی کا زندہ رہنا ممکن نہیں تھا اور یہی وجہ تھی کہ انہوں نے بچی کے والدین کو اس کی آخری رسومات کی تیاری کی ہدایت کر دی تھی، لیکن قدرت کے فیصلے انسان کے عقل و فہم سے بالا تر ہوتے ہیں۔ اس بچی کی پیدائش کو نو سال کا عرصہ گزر چکا ہے لیکن یہ آج بھی بچی زندہ ہے۔

ہمیشہ زندہ رہنے کیلئے دنیا کے امیر ترین افراد کس چیز کا خون دھڑا دھڑ اپنے آپ کو لگوارہے ہیں؟ جواب جان کر آپ کی بھی آنکھیں کھلی کی کھلی رہ جائیں گی، کوئی سوچ بھی نہ سکتا تھا کہ ایسا بھی ممکن ہے

رپورٹ کے مطابق رونالڈو اور جیسلین نامی جوڑے کے ہاں جنم لینے والی یہ بچی ایک پر اسرار بیماری ’ٹریچر کالنز سنڈروم‘ کا شکار ہے۔ جب یہ پیدا ہوئی تو پتا چلا کہ اس کے سر میں چالیس سے زائد ہڈیاں نہیں بن پائیں تھیں، جس کی وجہ سے اس کا چہرہ نہ ہونے کے برابر تھا۔ ڈاکٹروں کا کہنا تھا کہ وہ چند گھنٹے سے زائد زندہ نہیں رہ پائے گی لیکن جب وہ دو دن گزرنے کے باوجود بھی زندہ رہی تو ڈاکٹر حیران رہ گئے، لیکن ابھی انہیں یہ معلوم نہیں تھا کہ یہ بچی چند گھنٹے یا چند دن نہیں بلکہ آنے والے کئی سال بھی زندہ رہے گی۔

وٹوریہ نامی اس بچی کے چہرے کو نارمل شکل دینے کے لئے اس کے آٹھ آپریشن کیے گئے۔ اگرچہ چھ سال سے جاری کوششوں کے نتیجے میں بڑی حد تک اس کے چہرے کے خدوخال بن چکے ہیں لیکن ابھی بھی اسے صحت کے سنگین مسائل لاحق ہیں۔ ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ وہ اب بھی یقین کے ساتھ نہیں کہہ سکتے کہ یہ بچی مزید کتنا عرصہ زندہ رہے گی۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -