شمالی کوریا نے جوہری اور رمیزائل سازی کے پروگرام کو معطل نہیں کیا، اقوام متحدہ

شمالی کوریا نے جوہری اور رمیزائل سازی کے پروگرام کو معطل نہیں کیا، اقوام ...

  

نیویارک/ماسکو(این این آئی)روس نے شمالی کوریا سے متعلق اقوام متحدہ کی خصوصی رپورٹ کو جاری ہونے سے روک دیا ہے۔ اقوام متحدہ میں روس کے مستقل مندوب نے کہاہے کہ رپورٹ کے بعض مندرجات کے ساتھ ماسکو حکومت متفق نہیں ہے۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق رپورٹ بتایاگیا کہ میں شمالی کوریائی حکومت نے جوہری اور میزائل سازی کے پروگرام کو معطل نہیں کیا اور اس کے حوالے سے ریسرچ پروگرام کو بدستور جاری رکھا ہے۔ رپورٹ میں واضح کیا گیا کہ شمالی کوریا اقوام متحدہ کی طرف سے عائد پابندیوں کی خلاف ورزی کا سلسلہ بھی جاری رکھے ہوئے ہیں۔اس رپورٹ کے مطابق 2018 کے دوران اس کمیونسٹ ملک نے پٹرولیم مصنوعات کا ذخیرہ کرنے کے ساتھ چند ممالک سے کوئلے کی منتقلی بھی جاری رکھی ہوئی ہے۔ رپورٹ کے اسی حصے پر ماسکو حکومت کو اعتراض ہے کہ شمالی کوریا نے سن 2018 کے لیے مقرر کوٹے سے زیادہ خام تیل جمع کر لیا ہے اور اس تیل کی فراہمی کیسے اور کن ممالک نے کی ہے۔ یہ بھی رپورٹ میں واضح کیا گیا کہ وہ شام کے لیے اسلحہ خریدنے والوں کو جہاں ہتھیار فراہم کر رہا ہے وہاں یمن، لیبیا اور سوڈان کے باغی گروپوں کو بھی گولہ بارود بیچ رہا ہے۔ برطانیہ کے مطابق یہ رپورٹ آزاد مبصرین نے مرتب کی ہے اور غیرجانبدار مواد کی حامل ہے۔اقوام متحدہ کی رپورٹ اس لیے بھی اہم ہے کہ یہ رواں برس جون میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور شمالی کوریائی لیڈر کِم جونگ ان کی سنگا پور میں ہونے والی ملاقات کے بعد مرتب کی گئی ہے۔ اس ملاقات میں شمالی کوریائی لیڈر نے جوہری پالیسی کو ترک کرنے کا وعدہ دیا تھا جب کہ رپورٹ اس وعدے سے اتفاق نہیں کرتی۔اس رپورٹ کے باضابطہ اجرا کے لیے جمعہ اکتیس اگست کو سلامتی کونسل کا خصوصی اجلاس طلب کیا گیا ہے۔ اس اجلاس میں روس کے اعتراضات کا احاطہ کیا جائے گا۔ سلامتی کونسل کے رکن ممالک اس میٹنگ میں اعتراضات کو رفع کرنے کی کوشش کریں گے۔ اقوام متحدہ میں برطانوی مندوب کیرن پیئرس نے حیرت کے ساتھ کہا کہ یہ ایک عجیب پیش رفت ہے کہ ایسی رپورٹ بھی اعتراض کی زد میں ہے، جو آزاد ماہرین نے مرتب کی ہے۔

مزید :

عالمی منظر -