صدارتی انتخابات کیلئے میر افضل کے کاغذات مسترد کرنا ناانصافی ہے

صدارتی انتخابات کیلئے میر افضل کے کاغذات مسترد کرنا ناانصافی ہے

  

مہمند (نمائندہ پاکستان) مہمند، صدارتی انتخابات کے اُمیدوار میر افضل مہمند کے کاغذات مستردکرنا سرا سر نا انصافی ہے۔ اسلام آباد چیف الیکشن کمشنر کی طرف سے مختصر وقت دینے پر اظہار آفسوس،قبائلی ضلع مہمند سے صدارتی انتخابات کیلئے آزاد اُمیدوار میر افضل مہمند نے الیکشن کمیشن آف پاکستان کی طرف سے اُمیدواروں کے کاغذات کی جانچ پڑتال کو مختصر وقت دینے پر آفسوس کا اظہار کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جن اُمیدواروں کے کاغذات مسترد ہوئے ہیں اُن میں اکثریت ان لوگوں کی تھی جن کے پاس تجویز کنندہ اور نہ تائید کنندہ بذات خود موجود تھے۔ انہوں نے کہا کہ میرے پاس تجویز کنندہ سنیٹر ملک ہلال رحمن اور تائید کنندہ ایم پی اے امجد آفریدی موقع پر موجود تھے لیکن جب ہم سوا بارہ بجے الیکشن کمیشن کے دفتر پہنچے تو جانچ پڑتال کا وقت ختم کر دیا گیا تھا۔ اور ہماری تاخیر کی وجہ یہ تھی کہ میرا تجویز کنندہ ضلع مہمند سے اور تائید کنندہ ضلع کوہاٹ سے آرہے تھے۔ یہ دونوں اضلع اسلام آباد سے کافی دور ہیں اور وہاں کے راستوں میں رش بھی بہت ہوتا ہے۔ پاکستان کے اتنے بڑے اور اہم منصب پر فائز ہونے کے اُمیدوار کو مختصر وقت دینا سرا سر نا انصافی ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ ایک دکھاوا ہے اور پاکستانی عوام کی آنکھوں میں دھول جھونکنا ہے۔ چیف جسٹس آف پاکستان اور پاکستانی عوام سے اپیل ہے کہ وہ اس واقعہ کا نوٹس لے۔ انہوں نے کہا کہ اگر نئے پاکستان کا مطلب یہ ہے تو یہ کسی کو منظور نہیں ہے۔ پاکستان کا نعرہ سچ دکھانے کیلئے پورے پاکستان کیلئے ایک ہی قانون ہونا چاہئے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -