اپوزیشن کی بلیک میلنگ میں نہیں آئیں گے، پاکستان بلیک لسٹ ہوا تو بھیانک نتائج ہونگے: شبلی فراز

  اپوزیشن کی بلیک میلنگ میں نہیں آئیں گے، پاکستان بلیک لسٹ ہوا تو بھیانک ...

  

 اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) وفاقی وزیر اطلاعات ونشریات نے کہا ہے کہ اپوزیشن اپنی لیڈرشپ کو بچانے کے لیے فیٹف قانون سازی کی مخالفت کر رہی ہے۔ اگر پاکستان بلیک لسٹ میں گیا تو بڑے بھیانک نتائج ہونگے۔اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ پاکستان بلیک لسٹ کا متحمل نہیں ہو سکتا۔ اپوزیشن نے پاکستان کے خلاف ووٹ دیا۔ قانون سازی پر شور مچانے والوں کو اپنے ماضی کے کردار کا پتا ہے۔شبلی فراز کا کہنا تھا کہ ہم مشترکہ سیشن میں پاکستان کے مفاد میں فیصلہ کریں گے۔ ہم اپوزیشن کی بلیک میلنگ میں نہیں آئیں گے۔ حکومت کی بنیادی پالیسیوں کا محور عوام ہے۔ ہماری حکمت عملی میں نیک نیتی بھی شامل ہے۔ اسی نیک نیتی کی وجہ سے کورونا پر کافی حد تک قابو پا لیا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ اپوزیشن اپنے لیڈروں کے لیے این آر او چاہتی ہے۔ اپوزیشن کو عوام سے کوئی دلچسپی نہیں، ان کا ایک ہی مقصد حکومت فیل ہو جائے۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ مہنگائی اور مشکل وقت ہے تاہم آنے والے دنوں میں آسانیاں پیدا ہوں گی۔ وزیراعظم ملک کو مشکلات سے نکال رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ اپوزیشن چاہتی ہے کہ چوری کی حساب نہ لو۔ ان کی 35 ترامیم کی ٹویٹ کیں تو انہیں بہت زیادہ تکلیف ہوئی۔ وفاقی وزیر نے بتایا کہ وزیراعظم روزانہ کراچی کی صورتحال پر بریفنگ لیتے ہیں، شہر قائد کے عوام اس وقت مشکل وقت سے گزر رہے ہیں، وہ جلد کراچی کا دورہ کریں گے۔شبلی فراز نے کہا ہے کہ بارشوں کے باعث شہر قائد کے عوام ایک امتحان سے گزررہے ہیں۔وزیر اطلاعات نے اپنے ٹویٹ میں کہا کہ پوری قوم کی ہمدردیاں شہر قائد کے عوام کے ساتھ ہیں۔ وفاقی حکومت اور اس سے منسلک اداروں کی جانب سے صوبائی حکومت کو ہر ممکن تعاون فراہم کیا جا رہا ہے۔ بارشوں کے باعث شہر قائد کے عوام ایک امتحان سے گزررہے ہیں۔پوری قوم کی ہمدردیاں آن کیساتھ ہیں۔وفاقی حکومت اور اس سے منسلک اداروں کی جانب سے صوبائی حکومت کو ہر ممکن تعاون فراہم کیا جارہاہے۔بلا سیاسی تفریق ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کیلئے تمام وسائل بروئے کار لائے جارہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ بلا سیاسی تفریق ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کیلئے تمام وسائل بروئے کار لائے جا رہے ہیں۔

شبلی فراز

مزید :

صفحہ اول -