ہم جی رہے ہیں کوئی بہانہ کیے بغیر

ہم جی رہے ہیں کوئی بہانہ کیے بغیر
ہم جی رہے ہیں کوئی بہانہ کیے بغیر

  

ہم جی رہے ہیں کوئی بہانہ کیے بغیر

اس کے بغیر، اس کی تمنا کیے بغیر

انبار اس کا پردۂ حرمت بنا میاں

دیوار تک نہیں گری، پردہ کیے بغیر

یاراں! وہ جو ہے میرا مسیحائے جان و دل

بے حد عزیز ہے مجھے، اچھا کیے بغیر

میں بسترِ خیال پہ لیٹا ہوں اس کے پاس

صبحِ ازل سے کوئی تقاضا کیے بغیر

اس کا ہے جو بھی کچھ ہے مرا، اور میں مگر

وہ مجھ کو چاہیے کوئی سودا کیے بغیر

یہ زندگی جو ہے اسے معنی بھی چاہیے

وعدہ ہمیں قبول ہے، ایفا کیے بغیر

اے قاتلوں کے شہر! بس اتنی سی عرض ہے

میں ہوں نہ قتل، کوئی تماشا کیے بغیر

مرشد کے جھوٹ کی تو سزا بے حساب ہے

تم چھوڑیو نہ شہر کو، صحرا کیے بغیر

ان آنگنوں میں کتنا سکون و سرور تھا

آرائشِ نظر تری ، پروا کیے بغیر

یاراں! خوشا، یہ روز و شبِ دل کہ اب ہمیں

سب کچھ ہے خوشگوار، گوارا کیا بغیر

گریہ کناں کی فرد میں اپنا نہیں ہے نام

ہم گریہ کن ازل کے ہیں، گریہ کیے بغیر

آخر ہیں کون لوگ جو بخشے ہی جائیں گے

تاریخ کے حرام سے، توبہ کیے بغیر

سنی بچہ وہ کون تھا، جس کی جفا نے جونؔ

شیعہ بنا دیا ہمیں، شیعہ کیے بغیر

شاعر: جون ایلیا

                               Ham Ji Rahay Hen Koi Bahaana Kiay Baghair

                                Uss K Baghair, Uss Ki Tamanna Kiay Baghiar

                                   Anbaar Uss Ka Parda  e  Hurmat Banaa Miaan

                                     Dewaar Tak Naheen Giri Parda Kiay Baghair

                           Yaaraan, Wo Jo Hay Mera Maseeha  e  Jaan  o  Dil

                               Behadd Aziz Hay Mujhay, Acha Kiay Baghiar

                               Main Bistar  e  Khayaal Pe Leta Hun Uss K Paas

                                                Sub  e  Azall Say Koi Taqaaza Kiay Baghair

             Uss Ka Hay Jo BhiKuch, Hay Mira AOr Main magar

                              Wo Mujh Ko Chaahiay Koi Saoda Kiay Baghiar

                                       Yeh Zindagi Jo Hay Usay Maani Bhi Chahien

                                   Waada Hamen Qabool Hay efaa Kiay Baghair

                                                    Ay Qaatlon K Shehr, Bass Itni Hi Arz Hay

                               Main Hun Na Qatl Koi Tamaasha Kiay Baghair

                                               Murshid K Jhoot kI To Sazaa Behissab Hay

                                      Tum Chorro Na Shehr Ko Sehra Kiay Baghair

                                    Un Aangnon Men Kitna Sakoon  o Saroor Tha

                                                 Araaish  e  Nazar Tiri Parwaa Kiay Baghair

Yaaraan, Khosha, Yeh Roa  o  Shab  e  Dil Keh Ab Hamen

           Sab Kuch Hay Khushgawaar Gawaara Kiay Baghair

               Girya Kunaan Ki Fard Men Apna Nahen Hay Name

                           Ham Giya Kun Azall K Hen Girya Kiay Baghair

                            Aakhir Hen Kon Log Jo Bakhshay Hi Jaaen Gay

                                            Tareekh K Haraam Say Taoba Kiay Baghair

                                    Sunni Bacha Kon ThaJiss Ki Jafaa nay JAON

                                                Shea Banaa Dia hamen Shea Kiay Baghair

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -