حالت حال کے سبب حالت حال ہی گئی

حالت حال کے سبب حالت حال ہی گئی
حالت حال کے سبب حالت حال ہی گئی

  

حالت حال کے سبب حالت حال ہی گئی

 

شوق میں کچھ نہیں گیا شوق کی زندگی گئی

 

تیرا فراق جان جاں عیش تھا کیا مرے لیے

 

یعنی ترے فراق میں خوب شراب پی گئی

 

تیرے وصال کے لیے اپنے کمال کے لیے

 

حالت دل کہ تھی خراب اور خراب کی گئی

 

اس کی امید ناز کا ہم سے یہ مان تھا کہ آپ

 

عمر گزار دیجیے عمر گزار دی گئی

 

ایک ہی حادثہ تو ہے اور وہ یہ کہ آج تک

 

بات نہیں کہی گئی بات نہیں سنی گئی

 

بعد بھی تیرے جان جاں دل میں رہا عجب سماں

 

یاد رہی تری یہاں پھر تری یاد بھی گئی

 

اس کے بدن کو دی نمود ہم نے سخن میں اور پھر

 

اس کے بدن کے واسطے ایک قبا بھی سی گئی

 

مینا بہ مینا مے بہ مے جام بہ جام جم بہ جم

 

ناف پیالے کی ترے یاد عجب سہی گئی

 

کہنی ہے مجھ کو ایک بات آپ سے یعنی آپ سے

 

آپ کے شہر وصل میں لذت ہجر بھی گئی

 

صحن خیال یار میں کی نہ بسر شب فراق

 

جب سے وہ چاندنا گیا جب سے وہ چاندنی گئی

شاعر : جون ایلیا

Haalat E Haal Ke Sabab, Haalat E Haal Hi Gayi

Shauq Men Kuch Nahin Gaya, Shauq Ki Zindagi Gayi

Ek Hi Haadsaa To Hai Aur Vo Yeh K Aaj Tak

Baat Nahi Kahi Gayi, Baat Nahi Suni Gayi

Baad Bhi Tere Jaan E Jaan Dil Men Rahaa Ajab Samaan

Yaad Rahii Teri Yahaan,  Phir Terii Yaad Bhi Gayi

Uske Badan Ko Di Namud Hamne Sukhan Me N Aur Phir

Uske Badan Ke Vaaste Ek Qabaa Bhi Si Gayi

Uskii Ummid E Naaz Kaa Hamse Ye Maan Tha Ke Aap

Umr Guzaar Deejiye,  Umr Guzaar Di Gayi

Uske Visaal Ke Liye, Apne Kamaal Ke Liye

Haalat E Dil, K Thi Kharaab, Aur Kharaab Ki Gayi

Teraa Firaaq Jaan E Jaan Aish Thaa Kyaa Mere Liye

Yaanii Tere Firaaq Men Khuub Sharaab Pi Gayi

Uski Gali Se Uth Ke Main Aan Paraa Thaa Apne Ghar

Ek Gali Ki Baat Thi,   Aur Gali Gali Gayi

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -