بات کوئی امید کی مجھ سے نہیں کہی گئی

بات کوئی امید کی مجھ سے نہیں کہی گئی
بات کوئی امید کی مجھ سے نہیں کہی گئی

  

بات کوئی امید کی مجھ سے نہیں کہی گئی

سو میرے خواب بھی گئے سو میری نیند بھی گئی

دل کا تھا ایک مدعا جس نے تباہ کر دیا

دل میں تھی ایک ہی تو بات، وہ جو فقط سہی گئی

جانے کیا تلاش تھی جون میرے وجود میں

جس کو میں ڈھونڈتا گیا جو مجھے ڈھونڈتی گئی

ایک خوشی کا حال ہے خوش سخن کے درمیاں

عزت شائقین غم تھی جو رہی سہی گئی

بود و نبود کی تمیز، ایک عذاب تھی کہ تھی

یعنی تمام زندگی، دھند میں ڈوبتی گئی

اس کے جمال کا تھا دن، میرا وجود اور پھر

صبح سے دھوپ بھی گئی، رات سے چاندنی گئی

جب میں تھا شہر ذات کا تھا میرا ہر نفس عذاب

پھر میں وہاں کا تھا جہاں حالت ذات بھی گئی

گرد فشاں ہوں دشت میں سینہ زناں ہوں شہر میں

تھی جو صبائے سمت دل، جانے کہاں چلی گئی

تم نے بہت شراب پی اس کا سبھی کو دکھ ہے جون

اور جو دکھ ہے وہ یہ ہے تم کو شراب پی گئی

شاعر: جون ایلیا

Baat Koi Umeed Ki Mujh Say nahen Kahi Gai

So Miray Khaab Bhi Gaeyu, So Miri Neend Bhi Gai

Dil Ka Tha Aik Muda, jiss Nay Tabaah Kar Dia

Dil Men Thi Aik Hi To Baat , WO Jo Faqat Sahi Gai

Jaaniay Kia Talaash Thi JAUN Miray Wajood Men

Jiss Ko Main Dhoondt aGia, Jo Mujhay Dhoondti Gai

Aik Khushi Ka Haal HayKhush Sukhnaan K Darmiaan

Ezzat  e  Shaaiqeen  e  Gham Thi Jo Rahi Sahi Gai

Bood  o  Nabood Ki Tameez, Aik Azaab Thi Keh Thi

Yaani Tamaam Zindagi Dhund Men Doobti Gai

Uss K Jamaal Ka Tha Din Mera Wajood Aor Din

Subh  Say Dhoop Bhi Gai, Raat Say Chaandni Gai

Jab Main Tha Shehr  e  Zaat KaTha Mira Har Nafas Azaab

Phir Main Wahaan Ka Tha JahaanHaalat  e  Zaat Bhi Gai

Gard Fashaan Hun Dasht Men Seena Zanaan Hun Shehr Men

Thi Jo Sabaa   e  Samt  e  Dil Jaanay Kahaan Chali Gai

Tum Nay Bahut Sharaab Pi Uss Ka Sabhi Ko Dukh Hay JAUN

Aor Jo Dukh Hay Wo Yeh Hay Tum Ko Sharaab Pi Gai

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -