نہ کوئی ہجر، نہ کوئی وصال ہے شاید

نہ کوئی ہجر، نہ کوئی وصال ہے شاید
نہ کوئی ہجر، نہ کوئی وصال ہے شاید

  

نہ کوئی ہجر، نہ کوئی وصال ہے شاید

بس ایک حالت بے ماہ و سال ہے شاید

ہوا ہے دیر و حرم میں جو معتکف، وہ یقین

تکان کشمکش احتمال ہے شاید

خیال و وہم سے برتر ہے اسکی ذات،سو ہے

نہایت ہوس خد و خال ہے شاید

میں سطح حرف پہ تجھ کو اتار لایا ہوں

ترا زوال ہی میرا کمال ہے شاید

میں ایک لمحہ موجود سے ،یاں نہ واں

سو جو بھی میرے لیے ہے محال ہے شاید

وہ انہماک ہر اک کام میں کہ ختم نہ ہو

تو کوئی بات ہوئی ہے ؟ ملال ہے شاید

گماں ہوا ہے یہ انبوہ سے جوابوں کے

سوال خود ہی، جواب سوال ہے شاید

شاعر: جون ایلیا

Na Koi Hijr Na Visaal Hay Shaayad

Bass AIk Haalat  e  Be Maah  o Saal Hay Shaayad

Hua Hay Dair  o Haram Men Jo Motakif , Wo Yaqeen

Takaan e  kashmaksh  e  Ehtamaal Hay Shaayad

Khayaal  o  Wehm Say Bartar Hay Uss Ki Zaat , So Wo

Nihaayat  e  Hawas  e  Khad  o  Khaak Hay Shaayad

Main Sath  e  Harf Pe Tujh Ko Utaar Laaya Hun

Tira Zawaal Hi Mera Kamaal Hay Shaayad

Main Aik Lamha  e  Maojood Say Idhar Na Udhar

So Jo Bhi Merauy Liay Hay, Muhaal Hay Shaayad

Wo Inkamaak Har Ik AKam Men Keh Khatm Na Ho

To Koi Baat Hui ,Malaal Hay Shaayad

Gumaan Hua Hay  Yeh Anboh  Say Jawaabon K

Sawaal Khud Hi Jawaab Sawaal Hay Shaayad

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -