اک ہنر ہے جو کر گیا ہوں میں

اک ہنر ہے جو کر گیا ہوں میں
اک ہنر ہے جو کر گیا ہوں میں

  

اک ہنر ہے جو کر گیا ہوں میں

سب کے دل سے اُتر گیا ہوں میں

کیسے اپنی ہنسی کو ضبط کروں

سُن رہا ہوں کہ گھر گیا ہوں میں

کیا بتاؤں کہ مر نہیں پاتا

جیتے جی جب سے مر گیا ہوں میں

اب ہے اپنا سامنا درپیش

ہر کسی سے گزر گیا ہوں میں

وہی ناز و ادا ، وہی غمزے

سر بہ سر آپ پر گیا ہوں میں

شاعر: جون ایلیا

Ek Hunar Hay Jo Kar Gia Hun Main

Sab Kay  Dil Say  Utar  Gia Hun Main

Kaise Apni Hansi Ko Zabt Karoon

Sun Raha Hoon Ke Ghar Gia Hun Main

Kia Bataaun Keh  Mar Nahin Paata

Jeetay  Ji Jab Se Mar Gia Hun Main

Ab Hai   Apna Saamnaa Darpesh

Har Kisi Se Guzar Gia Hun Main

Woh Hi Naaz   o   Adaa, Woh Hi Ghamzay

Sar  Ba   Sar Aap Par Gia Hun Main

Ajab Ilzaam Hoon Zamaane Ka

Ke Yahan Sab Ke SarGia Hun Main

Kabhi Khud Tak Pahunch Nahin Paaya

Jab Ke Waan Umr Bhar Gia Hun Main

Tum Se Jaanaan Mila Hoon Jis Din Se

Be  Tarah, Khud Se Dar Gia Hun Main

Koo   e   Jaanaan Mein Sog Barpaa Hai

Ke Achaanak, Sudhar Gia Hun Main

Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -